یادوں کا حِساب رکھ رہا ہُوں |جون ایلیا |

یادوں کا حِساب رکھ رہا ہُوں |جون ایلیا |

  

یادوں کا حِساب رکھ رہا ہُوں

سینے میں عذاب رکھ رہا ہُوں

تم کچھ کہے جاؤ، کیا کہوں میں

بس دِل میں جواب رکھ رہا ہوں

دامن میں کیے ہیں جمع گرداب

جیبوں میں حباب رکھ رہا ہوں

آئے گا وہ نخوتی سو میں بھی

کمرے کو خراب رکھ رہا ہوں

تم ہر میں، صحیفہ ہائے کہنہ

اک تازہ کتاب رکھ رہا ہوں

شاعر: جون ایلیا

Yaadon Ka Hisaab Rakh Raha Hun

Seenay Men Azaab rakh Raha Hun

Tum Kuch kahay Jaao, Kia Kahun Main

Bass Dil Men Jawaab Rakh Raha Hun

Daaman Men Kiay Hen jama Gardaab

Jaibon Men Hubaab Rakh RahaHun

Aaey Ga Wo Nakhooti So MAin Bhi 

Kamray Ko Kharaab Kar Raha Hun

Tum Par Main Saheefa  e  Kohna

Aik Taaza Kitaab Rakh Raha Hun

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -