مرمٹا ہوں خیال پر اپنے| جون ایلیا |

مرمٹا ہوں خیال پر اپنے| جون ایلیا |
مرمٹا ہوں خیال پر اپنے| جون ایلیا |

  

مرمٹا ہوں خیال پر اپنے

وجد آتا ہے حال پر اپنے

ابھی مت دیجیو جواب کہ میں

جھوم تو لوں سوال پر اپنے

عمر بھر اپنی آرزو کی ہے

مر نہ جاؤں وصال پر اپنے

اک عطا ہے مری ہوس نگہی

ناز کر خدو خال پر اپنے

اپنا شوق ایک، حیلہ ساز آؤ

شک ہے اس کو جمال پر اپنے

جانے اس دم وہ کس کا ممکن ہو

بحث مت کر محال پر اپنے

تُو بھی آخر کمال کو پہنچا

مست ہوں میں زوال پر اپنے

کوئی حالت تو اعتبار میں ہے

خوش ہوا ہوں ملال پر اپنے

خود پہ نادم ہوں جون یعنی میں

ان دنوں ہوں کمال پر اپنے

شاعر: جون ایلیا

Mar Mitta Hun Khayaal Par Apnay

Wajd Aata Hay Haal Par Apnay

Abhi MAt Dijio jawaab Keh Main

Jhoom To Lun Sawaal Par Apnay

Umr Bhar Aoni Aarzu Ki Hay

Mar Na Jaaun Visaal Par Apnay

Ik Ataa Hay Miri Hawas Agahi

Naaz Kar Khad  o  Khaal Par APnay

Apna Shaoq Aik Heela Saaz Aao

Shak Hay Uss Ki Jamaal  Par Apnay

Jaanay Uss Dam Wo Kiss Ka  Mumkin Ho

Bahis Kar Muhaal Par Apnay

Tu Bhi Aakhir Kamaal Ko Pahuncha

Mast Hun Main Zawaal Par Apnay

Koi Haalat To Aitbaar Men Hay

Khudh Hua Hun Malaal Par Apnay

Khud Pe Naadim Hun JAUN Yaani

In  Dino Hun Kamaal Par  APnay

 Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -