زرعی یونیورسٹی پشاور اور پی ایچ ایس اے کے مابین لیٹر آف انڈر سٹینڈنگ پر دستخط

زرعی یونیورسٹی پشاور اور پی ایچ ایس اے کے مابین لیٹر آف انڈر سٹینڈنگ پر دستخط

  

پشاور(سٹی رپورٹر)زرعی یونیورسٹی پشاور اور صوبائی ہیلتھ سروسز اکیڈمی (پی ایچ ایس اے) خیبر پختونخوا کے مابین لیٹر آف انڈرسٹینڈنگ پر دستخط کئے گئے. یونیورسٹی وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر جہان بخت اور پی ایچ ایس اے کے ڈائریکٹر جنرل ڈاکٹر جان باز  نے لیٹر آف انڈرسٹینڈنگ پر دستخط کیں.اس موقع پر ڈین فیکلٹی نیوٹریشن سائنسز پروفیسر ڈاکٹر محمد ایوب، شعبہ ہیومن نیوٹریشن کے چئیرمین ڈاکٹر ضیاء الدین، ڈاکٹر نعمت اللّٰہ، ڈاکٹر حمیرا وصالہ، پی ایچ ایس اے کے ڈائریکٹر اکیڈمکس ڈاکٹر زاہد اشرف، ٹریننگ کوارڈینیٹر عابد اختر حسین، ڈپٹی ڈائریکٹر ڈاکٹر سائرہ اور ڈائریکٹر نرسنگ ڈاکٹر آصف بھی موجود تھے.  لیٹر آف انڈرسٹینڈنگ (ایل او یو) کے تحت 'تھرڈ پارٹی فنڈڈ' سرگرمیاں بھی کی جائیں گی۔ پی ایچ ایس اے شعبہ ہیومن نیوٹریشن کو انفراسٹرکچر سروسز اور دیگر متعلقہ سہولیات فراہم کرکے صوبہ بھر میں ان کی تربیتی مقامات پر تعلیمی سرگرمیوں کے لئے سہولیات فراہم کرے گی۔ غیر سبسڈی سرٹیفکیٹ / ڈپلومہ کورسز (پی ایچ ایس اے کی طرف سے پیش کردہ) کی صورت میں شعبہ ہیومن نیوٹریشن کی طرف سے تعلیمی وسائل کی فراہمی کے ساتھ، پی ایچ ایس اے یونیورسٹی کے قواعد کے مطابق زرعی یونیورسٹی پشاور کی آمدنی میں مناسب حصہ مختص کرے گی۔وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر جہان بخت نے شرکاء کو خوش آمدید کہتے ہوئے انہیں یونیورسٹی میں جاری مختلف سرگرمیوں سے متعلق بریفنگ دی اور کہا کہ یونیورسٹی میں ہائی کوالیفائیڈ فیکلٹی موجود ہیں جو معیاری تعلیم و تحقیق کے ساتھ ساتھ طلبہ و طالبات کو بہترین تربیت فراہم کر رہی ہیں. انہوں نے کہا کہ یونیورسٹی میں طلباء کی نصابی سرگرمیوں سمیت دوسری صحت مندانہ سرگرمیوں کی بھی نگرانی کی جاتی ہیں، انہوں نے کہا کہ آج کل دنیا غذائی بحران کا سامنا کر رہی ہے، پاکستان میں عوام خاص کر بچے اور خواتین کو غذائیت سے بھر پور خوراک کی کمی کا سامنا ہیں، جس کی وجہ سے بچوں اور خواتین کی قوت مدافعت کمزور ہوتی جارہی ہے اور وہ آسانی سے مختلف امراض کے شکار ہوجاتے ہیں، اس کی سب سے بڑی وجہ ناقص غذا ہے اور ناقص غذائیت کی جتنی جلدی روک تھام کی جاسکے اتنا بہتر ہے، عام آدمی کو متوازن خوراک اور بنیادی غذائی اجزاء کا علم نہیں ہوتا، ماہرین طب اس بات پر متفق ہیں کہ صحت مند زندگی کے لئے متوازن غذا اور متوازن طرز زندگی ضروری ہی نہیں بلکہ بنیادی شرط ہے. مگر بدقسمتی سے ہم ان دو اصولوں کو نظرانداز کر رہے ہیں اوراس کے سبب ہم لاتعداد امراض کے شکار ہوتے جا رہے ہیں. اس حوالے سے آگاہی بہت ضروری ہیں، زرعی یونیورسٹی پشاور اس سلسلے میں سیمینارز، ورکشاپس اور ٹرننگز کا انعقاد کرے گی. انہوں نے کہا کہ  زراعت پر مبنی معیشت کا نظام جو پہلے ہی غذائی عدم تحفظ کا شکار ہیں، ہماری یونیورسٹی کے ماہرین خوراک میں غذائیت کی کمی پورا کرنے اور پیداوار میں اضافہ کرنے کے لئے ہمہ تن کوشاں ہیں اور اس سلسلے میں یونیورسٹی کا تعاون جاری رہے گا. انہوں نے ڈائریکٹر جنرل پی ایچ ایس اے ڈاکٹر جان باز کا شکریہ ادا کرتے ہوئے امید ظاہر کی کہ اس باہمی افہام و تفہیم کے دوررس نتائج برآمد ہوں گے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -