ہائیکورٹ، زرعی اراضی ایکوائرکرنے کیخلاف عبوری حکم امتناعی برقرار

ہائیکورٹ، زرعی اراضی ایکوائرکرنے کیخلاف عبوری حکم امتناعی برقرار

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہورہائی کورٹ کے مسٹرجسٹس شاہد کریم نے ریور راوی اربن پراجیکٹ کے لئے زرعی اراضی ایکوائر کرنے کے خلاف عدالتی عبوری حکم امتناعی کی واپسی کے لئے دائرپنجاب حکومت کی متفرق درخواست واپس لینے کی بنیاد پرمستردکرتے ہوئے پراجیکٹ کے چیف ایگزیکٹو پر 5لاکھ روپے ہرجانہ عائدکردیا  فاضل جج نے ریمارکس دیئے کہ یہ اربوں روپے کا پراجیکٹ ہے جو نالائق لوگوں کے ہاتھ میں دے دیاگیا ایک ہی نوعیت کی مختلف درخواستیں دائر کی جارہی ہیں جس سے متعلقہ حکام کی بدنیتی ظاہر ہوتی ہے، ایک درخواست پر چیف ایگزیکٹو کے دستخط نہ ہونے کافاضل جج نے سخت نوٹس لیتے ہوئے ہدایت کی کہ چیف ایگزیکٹو وقفہ کے بعد عدالت میں پیش ہوں،عدالتی حکم پر چیف ایگزیکٹو عدالت میں پیش ہوئے،فاضل جج نے ریمارکس دیئے کہ پنجاب حکومت نے کیس کو مذاق بنا کررکھ دیاہے،متعلقہ حکام کے رویہ سے نہ صرف عدالت کاوقت ضائع ہورہاہے بلکہ یہ ٹیکس دہندگان کی رقم کابھی زیاں ہے،حکومت کی طرف سے متفرق درخواست واپس لینے کی استدعاکی گئی جسے منظور کرتے ہوئے فاضل جج نے درخواست واپس لینے کی بنیاد پر مستردکردی اور ریورراوی اربن پراجیکٹ کے چیف ایگزیکٹو پر 5لاکھ روپے ہرجانہ عائد کردیا،عدالت نے حسن نامی شہری کی طرف سے شیراز ذکا ایڈووکیٹ کی وساطت سے دائردرخواست پرعبوری حکم امتناعی جاری کررکھاہے جس کے خلاف یہ متفرق درخواست دائر کی گئی تھی،فاضل جج نے زرعی اراضی ایکوائرکرنے کے خلاف اپنے عبوری حکم امتناعی کوبرقراررکھتے ہوئے بنیادی کیس کی سماعت کے لئے 14ستمبر کی تاریخ مقررکردی ۔

مسترد

مزید :

صفحہ آخر -