ماہر ڈاکٹر نے ناک کے بال جڑ سے نوچنے کا انتہائی سنگین نقصان بتادیا

ماہر ڈاکٹر نے ناک کے بال جڑ سے نوچنے کا انتہائی سنگین نقصان بتادیا
ماہر ڈاکٹر نے ناک کے بال جڑ سے نوچنے کا انتہائی سنگین نقصان بتادیا
سورس: Instagram/drkaranrajan

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) ناک کے بال زیادہ بڑھ جائیں اور ناک سے باہر نظر آنے لگیں تو انتہائی بھدے دکھائی دیتے ہیں چنانچہ انہیں اس حد تک نہ بڑھنے دینا ہی بہتر ہوتا ہے تاہم کچھ لوگ ناک کے بالوں کو یکسر نوچ کر ختم کر دیتے ہیں۔ ایسے لوگوں کو بھی ایک برطانوی ڈاکٹر نے متنبہ کر دیا ہے کہ یہ عمل بھی ان کی صحت کے لیے سنگین نقصان کا حامل ہو سکتا ہے۔ دی سن کے مطابق ڈاکٹر کرن راج نے اپنے انسٹاگرام اکاﺅنٹ پر ایک پوسٹ میں بتایا ہے کہ ہماری ناک کے بال درحقیقت ایک فلٹر کا کام کرتے ہیں چنانچہ انہیں یکسر ختم کر دینا بہت نقصان دہ ہو سکتا ہے۔

ڈاکٹر راج نے بتایا ہے کہ ”ہمارے ناک میں دو طرح کے بال پائے جاتے ہیں۔ ایک مائیکروسکوپک سیلیا ہوتے ہیں۔ یہ لعاب دار مادے کو فلٹر کرتے اور سے گلے کی پچھلی جانب بھیجتے ہیں جو بالآخر معدے میں پہنچ جاتا ہے۔ دوسری قسم کے بال وائبریسا کہلاتے ہیں۔ یہ بڑے بال ہوتے ہیں جو ہمیں باہر سے نظر آتے ہیں اور جنہیں ہم اکھاڑتے ہیں۔ یہ بال بڑے اجزاءکو ناک کے اندرونی حصے میں جانے سے روکتے ہیں۔اگر آپ انہیں اکھاڑ دیتے ہیں تو ایک طرف بڑے اجزاءناک کے اندر جا کر آپ کے لیے مسائل پیدا کر سکتے ہیں اور دوسرے جس جگہ سے یہ بال اکھڑیں گے اس معمولی زخم سے جراثیم آپ کے جسم میں داخل ہو کر انفیکشن کا سبب بن سکتے ہیں۔ چنانچہ ہمیں بالوں کو اکھاڑنے سے گریز کرنا چاہیے۔ بہرحال جو بال ناک سے باہر نظر آ رہے ہوں انہیں مناسب حد تک قینچی سے کاٹ دینا محفوظ عمل ہے۔“

مزید :

تعلیم و صحت -