ایل ڈی اے سگنل فری منصوبہ کے باعث آلودگی،ماحولیات کے افسران کی عدالت طلبی

ایل ڈی اے سگنل فری منصوبہ کے باعث آلودگی،ماحولیات کے افسران کی عدالت طلبی
  •  لاہور(اقبال بھٹی)قانونی مسائل آڑے آگئے، ایل ڈی اے کا ڈیڑھ ارب روپے کا سگنل فری منصوبے تاخیر کا شکار ہونے لگا۔ہائیکورٹ کی طرف سے محکمہ ماحولیا ت کو طلب کرنے اور تاجروں کی جانب سے منصوبے کے حق میں عدالت سے رجوع کرنے کیوجہ سے منصوبے پر کام روک دیا گیا۔ لاہور ہائیکورٹ نے سڑک کے اطراف سے درخت کاٹے جانے اور آلودگی پھیلنے پر محکمہ ماحولیا ت کو طلب کیا تھا۔مین بلیوارڈ روڈ کے تاجروں نے بھی ایل ڈی اے کی پارٹی بنتے ہوئے مؤقف اپنایا ہے کہ سگنل فری منصوبہ ٹریفک مسائل حل کرنے میں اہم کردار ادا کرے گا اوراس کی تکمیل کا مطالبہ کر دیا ہے۔رپورٹ کے مطابق قانونی جنگ کیوجہ سے 6ماہ میں تکمیل ہونے والا منصوبہ تاخیر کا شکار ہو سکتا ہے جس سے شہریوں کی مشکلات میں اضافہ ہو جائے گا۔ محکمہ ایل ڈی اے جیل روڈ سے مین بلیوارڈ لبرٹی مارکیٹ تک سگنل فری منصوبہ بنا رہا تھا جس پر کام بھی شروع کر دیا تھا ۔ڈیڑھ ارب روپے کی لاگت سے منصوبہ 6ماہ میں مکمل کیا جانا تھا۔جس میں 2انڈر پاس اور 5یو ٹرن بنائے جانے ہیں ۔منصوبہ پر کام شروع ہوتیہی محکمہ تحفظ ماحولیا ت آڑے آگیا ہے۔ دوسری طرف مین بلیوارڈ روڈ کے تاجروں نے بھی ایل ڈی اے کی پارٹی بنتے ہوئے سگنل فری منصوبے کو ماحولیاتی آلودگی کی راہ میں رکاوٹ قرار دیا ہے کہ فری سگنل روڈ بننے سے آلودگی میں کمی ہو گی کیونکہ سگنل پر گاڑیوں کی لمبی قطاروں کیوجہ سے آلودگی پھیلتی ہے اور گاڑیوں کے نہ رکنے کیوجہ سے آلودگی میں کمی آجائے گی۔

مزید : میٹروپولیٹن 1