چند سال قبل بجلی کے کھمبے لگے اور بلب جلائے گئے تو چند قبروں کے قریب لگے بلب پھٹ گئے، آج بھی پھٹ جاتے ہیں:گورکن توفیق

چند سال قبل بجلی کے کھمبے لگے اور بلب جلائے گئے تو چند قبروں کے قریب لگے بلب ...
چند سال قبل بجلی کے کھمبے لگے اور بلب جلائے گئے تو چند قبروں کے قریب لگے بلب پھٹ گئے، آج بھی پھٹ جاتے ہیں:گورکن توفیق

  


کراچی (ویب ڈیسک)خلائی مخلوق کی موجودگی سے انکار نہیں کیا جاسکتا اور وہ مختلف طریقوں سے اپنے آپ کو ظاہر بھی کرتے رہتے ہیں تاہم کبھی کبھار محض شرارت کے موڈ میں ہوتے ہیں تو بسااوقات نقصان بھی پہنچاتے ہیں، کراچی کے ایک قبرستان میں آج بھی اگر کوئی بلب جلایا جائے تو وہ فوری پھٹ جاتے ہیں کیونکہ شاید وہاں موجود مخلوق کو روشنی پسند نہیں۔

روزنامہ امت کے مطابق حیدرآباد سے تعلق رکھنے والے کورنگی چکراگوٹھ قبرستان کے گورکن توفیق نے بتایاکہ ”چند سال قبل بجلی والے آکر یہاں کھمبے لگاگئے تاہم جب بلب جلائے گئے تو ایک جگہ چند قبروں کے قریب لگے بلب پھٹ گئے، اب بھی اس جگہ بلب روشن کئے جائیں تو وہ فوراً پھٹ جاتے ہیں، شاید یہاں موجود قبر والوں کو روشنی پسند نہیں‘۔ اس نے مزید بتایا کہ قبرستان میں اکثر سفلی علم کرنے والے پرانی قبریں کھود کر مردے کی کھوپڑی اور دیگر ہڈیاں نکال کر لے جاتے ہیں۔ دو سال قبل چکرا گوٹھ کے ایک نوجوان نے یہاں موجود ایک بچے کی قبر کھود دی، وہ میت کا بازو کاٹ رہا تھا کہ کسی نے دیکھ لیا اور پکڑ کر پولیس کے حوالے کردیا۔

مزید : مافوق الفطرت