امریکہ اور برطانیہ نے روس پر ایسا الزام لگادیا کہ پوری دنیا ہنس ہنس کر لوٹ پوٹ ہوگئی، وہ کام جو ساری زندگی خود کرتے رہے اب۔۔۔

امریکہ اور برطانیہ نے روس پر ایسا الزام لگادیا کہ پوری دنیا ہنس ہنس کر لوٹ ...
امریکہ اور برطانیہ نے روس پر ایسا الزام لگادیا کہ پوری دنیا ہنس ہنس کر لوٹ پوٹ ہوگئی، وہ کام جو ساری زندگی خود کرتے رہے اب۔۔۔

  


واشنگٹن (نیوز ڈیسک) اسے مکافات عمل کہئیے یا قسمت کی ستم ظریفی، لیکن بہت ہی دلچسپ اور حیران کن بات ہے کہ آج امریکہ کسی دوسرے ملک پر اسی جرم کا الزام لگا رہا ہے جو کئی دہائیوں سے دنیا میں اس کی شناخت بنا ہوا ہے۔

دی انڈیپینڈنٹ کی رپورٹ کے مطابق امریکا کے وزیر دفاع جنرل جیمز میٹس نے اپنے برطانوی ہم منصب کے ساتھ ملکر روس پر الزام عائد کر دیا ہے کہ یہ ملک دوسرے ممالک کے انتخابی عمل و دیگر اندرونی معاملات میں میں مداخلت کرتا ہے۔ انہوں نے یہ بیان برطانوی وزیر دفاع سے ملاقات کے بعد جاری کیا، جس میں کہا کہ روس ایک عرصے سے دیگر ممالک کے معاملات میں مداخلت کر رہا ہے اور یہ عمل بار بار کی وارننگ کے باوجود مسلسل جاری ہے۔ اسی طرح برطانوی وزیر دفاع کا کہنا تھا کہ اگر معاملات اسی طرح چلتے رہے تو روس کے ساتھ حالات کی بہتری کی کوئی گنجائش نہیں۔ دونوں وزرائے دفاع اس بات پر متفق تھے کہ روس صرف امریکہ اور برطانیہ ہی نہیں بلکہ دنیا کے دیگر خطوں میں بھی مختلف ممالک کے اندرونی معاملات میں مداخلت کرکے عدم استحکام کو فروغ دے رہا ہے۔

تیسری عالمی جنگ، طبل جنگ بج گیا، دنیا کی سب سے بڑی فوج نے روس کو نشانہ بنانے کی تیاری شروع کردی

روس پر بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزیوں کا الزام عائد کرتے ہوئے امریکی وزیر دفاع کا کہنا تھا ”روس کی جانب سے بین الاقوامی قانون کی خلاف ورزی ریکارڈ پر ہے۔ کرائیمیا سے لے کر دیگر ممالک کے الیکشن میں مداخلت تک یہ بات دیکھی جاسکتی ہے۔ روس اب بھی چاہے تو اپنا رویہ بدل کر بین الاقوامی روایات اور قانون کے مطابق عمل کرسکتا ہے۔“

یاد رہے کہ امریکا کے حالیہ انتخاب میں روسی مداخلت کے الزامات نے امریکا میں ایک ہنگامہ کھڑا کر رکھا ہے۔ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے مخالفین کا کہنا ہے کہ انہیں جتوانے میں روس کا ہاتھ ہے، تاہم وہ کہتے ہیں کہ انہیں نقصان پہنچانے کے لئے بیرونی ہاتھ متحرک رہا۔

مزید : بین الاقوامی