نام نہاد پیروں نے اسلام کے خوبصورت چہرے کو مسخ کیا ،مذہب کو بدنام کرنے والے عاملوں اور پیروں کے خلاف گرینڈ آپریشن کیا جائے :سینیٹر ساجد میر

نام نہاد پیروں نے اسلام کے خوبصورت چہرے کو مسخ کیا ،مذہب کو بدنام کرنے والے ...
نام نہاد پیروں نے اسلام کے خوبصورت چہرے کو مسخ کیا ،مذہب کو بدنام کرنے والے عاملوں اور پیروں کے خلاف گرینڈ آپریشن کیا جائے :سینیٹر ساجد میر

  


فیصل آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن) امیر مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان سینیٹر پروفیسر ساجد میر نے کہا ہے کہ مذہب کو بدنام کرنے والے عاملوں اور پیروں کے خلاف گرینڈ آپریشن کیا جائے،نام نہاد پیروں نے اسلام کے خوبصورت چہرے کو مسخ کیا ہے۔مدارس اسلام کے مضبوط قلعے اور پاکستانی قوم کا مشترکہ اثاثہ ہیں،دینی مدارس کے خلاف بے بنیاد اور غلط پروپیگنڈا کیا جارہا ہے۔

جامعہ سلفیہ کی سالانہ تقریب تقسیم انعامات سے خطاب اور میڈیا سے گفتگوکرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مدارس میں قرآن وسنت کی تعلیم حاصل کرنے والوں کو امریکہ کے کہنے پر دہشت گرد قرار نہیں دیا جاسکتا، مدارس دینیہ سے امن اور محبت کا درس دیا جا تا ہے،مدارس نظریہ پاکستان کے بھی محافظ ہیں، مدارس کے خلاف سازشیں کرنے والے اپنے گریبان میں جھانکیں، ماضی میں ڈکٹیٹر پرویز مشرف نے بھی مدارس کے خلاف پابندیاں اور مدارس سیل کرنے کا منصوبہ بنایا تھا جسے دینی قوتوں نے ناکام بنایا۔ پروفیسر ساجد میر نے کہا کہ لبرل ازم کے نام پر پاکستان کے معاشرے کو لادین نہیں بننے دیں گے، دینی مدارس کے طلبہ دین اور دینی اقدار کے محافظ ہیں، انکے خلاف پہلے بھی سازشیں ناکام ہو ئیں اور آئندہ بھی ہوں گی، مدارس میں ملک بھر میں لاکھوں طلبا ء کو مفت تعلیم دی جاتی ہے،اس لیئے مدارس کبھی بھی بند نہیں ہوسکتے ۔انہوں نے مزید کہا کہ ہم دینی مدارس کے خلاف اٹھنے والے قدموں کو روکیں گے،  مدارس کے طلباء مستقبل کے معمار ہیں، دنیا میں جو بھی انقلاب اٹھے گاوہ مدارس سے ہی اٹھے گا ،مستقبل دینی مدارس کے ہاتھ میں ہے۔ پروفیسر ساجد میر نے کہا کہ دینی مدارس پاکستانی قوم کا مشترکہ اثاثہ ہے اور قوم ہمیشہ کی طرح ان اداروں کی خدمت کو اپنا دینی فریضہ سمجھ کر سرانجام دے گی،دینی مدارس کے خلاف کسی قسم کی سازش کامیاب نہیں ہونے دیں گے،دینی مدارس اور پاکستان کااستحکام لازم وملزوم ہے۔انہوں نے مدارس کے اساتذہ اور طلبہ سے عہد لیا کہ وہ دینی مدارس کے خلاف کسی قسم کی ساز ش کو کامیاب نہیں ہونے دیں گے اور نہ ہی مدارس بارے بے بنیاد پروپیگنڈے پر کان دھریں گے۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیر مملکت برائے تعلیم انجینئر میاں بلیغ الرحمن نے کہا کہ مدارس کے ساتھ مل کر تعلیمی نظام و نصاب کو بہتر بنانے کے لیے مشترکہ کوششیں کی جائیں گی،  مدارس ثانوی تعلیم کے وفاقی بورڈ کا مروجہ نصاب اپنائیں گے، وفاقی تعلیمی بورڈ مدارس کو اس ضمن میں تربیت اور استعداد کار بڑھانے کے لیے معاونت فراہم کرے گا،  دینی مدارس سے اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے والے طلبا کو امتحانات میں انگلش، اسلامیات اور مطالعہ پاکستان کے پرچے بھی حل کرنا ہوں گے،دینی مدارس کو قومی دھارے میں لانے کے لیے کوشش جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں موجود نوے فیصد سے زائد مدارس کا انتہا پسندی اور دہشت گردی سے کوئی تعلق نہیں اور جن کے خلاف شواہد ملتے ہیں ان کے خلاف کارروائی بھی کی جاتی ہے۔

مزید : فیصل آباد


loading...