سلیکشن کمیٹی کے فیصلے کا نتیجہ ،وائٹ واش شکست

سلیکشن کمیٹی کے فیصلے کا نتیجہ ،وائٹ واش شکست
 سلیکشن کمیٹی کے فیصلے کا نتیجہ ،وائٹ واش شکست

  

پاکستان کرکٹ ٹیم کو ورلڈکپ سے قبل آسٹریلیا کے ہاتھوں وائٹ شکست نے ثابت کردیا کہ ٹیم میں سینئرکھلاڑیوں کی موجودگی بہت ضروری ہے اور ایسی ٹیم جس کے خلاف مضبوط ترین ٹیم بھی کامیابی حاصل کرنے کے لئے بہت جتن کرتی ہے کمزور ٹیم سے جیت کی توقع رکھنا بے معنی ہے ایک نہیں دو نہیں پورے پانچ میچوں میں شکست شرمناک شکست ہے جس سے شائقین کرکٹ میں بہت مایوسی ہے پاکستان کرکٹ بورڈ نے کیا سوچ کر یہ فیصلہ کیا۔کہ پاکستانی ٹیم میں پانچ سینئر ترین کھلاڑیوں کو ڈراپ کرکے ان کی جگہ ایسے کھلاڑیوں کو کھلایا جائے اب اس کا جواب تو پاکستان کی سلیکشن کمیٹی ہی دے سکتی ہے کیونکہ ان کا یہ تجربہ تو بری طرح ناکامی سے دوچار ہوا ہے

اس سیریز میں شکست سے پاکستان کرکٹ ٹیم کو جو دھچکہ لگا ہے اس کا اثر ایک طویل عرصہ تک ٹیم پر رہے گا اور ورلڈ کپ جو قریب ہے اس کی تیاریوں کے لئے بھی یہ اچھی بات نہیں ہے خیر جو ہوا سو ہوا مگر اچھا نہیں ہوا ایسے موقع پر جب ورلڈ کپ سر پر ہو تو ٹیم کے سینئر کھلاڑیوں کو آرام کروانے کے بجائے ان کو میدان میں اتارا جاتا ہے تاکہ وہ فارم میں آنے کے ساتھ ساتھ اپنی فٹنس بھی ثابت کریں اس حوالے سے کپتان سرفراز احمد نے سیریز سے قبل اچھی بات کی تھی کہ ان کو ٹیم میں رکھا جائے مگر ان کی کسی نے نہیں سنی پاکستان کرکٹ ٹیم نے چوتھے اور پانچویں ون ڈے میں قدرے بہتر کارکردگی کامظاہرہ کیامگر جیت کے قریب آتے آتے شکست سے دوچار ہوگئے

اسی طرح سے اگر ٹیم کے کھلاڑیوں کی فٹنس کی بات کی جائے تو ٹیم کے دو اہم ترین کھلاڑی جن میں شعیب ملک اور اوپنر امام الحق ان فٹ ہیں اور ورلڈ کپ سے قبل ان کی مکمل فٹنس ٹیم کے لئے بہت ضروری ہے ٹیم کے کئی اور کھلاڑی بھی اس وقت فٹنس مسائل کا شکار ہیں اب دیکھنا یہ ہے کہ پاکستان کرکٹ بورڈ نے کھلاڑیوں کو فٹنس بحال کرنے کی جو ڈیڈ لائن دی ہے اس وقت تک کون کون سے کھلاڑی فٹنس ثابت کرنے میں کامیاب ہوتے ہیں پاکستان کرکٹ ٹیم نے ورلڈ کپ سے قبل اب انگلینڈ کے خلاف ون ڈ ے میچز کی سیریز کھیلنی ہے

ضرور پڑھیں: اسد عمر کی چھٹی

اور انگلینڈ میں کھیلی جانے والی یہ سیریز بھی ورلڈ کپ سے قبل پاکستان کے لئے ایک بہت بڑا چیلنج ہوگا جس میں کھلاڑیوں کی کارکردگی اور فٹنس کھل کر سامنے آجائے گی ورلڈ کپ سے قبل ہر ٹیم کی کوشش ہوتی ہے کہ وہ کامیابی حاصل کرکے میگا ایونٹ میں عزم و حوصلہ بلند کرے ورلڈ کپ کے لئے قومی ٹیم میں کس کس کھلاڑی کو شامل کیا جاتا ہے اور کس بنیاد پر یہ بھی ایک سوالیہ نشان ہے

آسٹریلین ٹیم نے پاکستان کیخلاف اس سیریز میں بہت عمدہ پرفارمنس کا مظاہرہ کیا اور ایسے میچز میں بھی آسٹریلوی کھلاڑیوں نے حوصلہ نہیں ہارا جس میں میچ ان کے ہاتھ سے نکلتا نظر آرہا تھا اچھی ٹیم کی یہ ہی خوبی ہوتی ہے کہ وہ میچ کے آخری گیند تک لڑتی ہے اور بلاشبہ آسٹریلیا کی ٹیم کی ہمیشہ سے ہی ایسی پرفارمنس رہی ہے اسی سے ورلڈ کپ میں اگر پاکستانی ٹیم نے عمدہ پرفارمنس دینی ہے تو اس کو بھی ایسی ہی حکمت عملی طے کرنے کی ضرورت ہے۔

تاکہ جیت کے امکانات روشن ہوسکیں اور اس کے لئے بہترین مضبوط حکمت عملی کی بھی ضرورت ہے ۔

مزید : رائے /کالم