احتساب کے نام پر ہم سے سیاسی انتقام لیا جارہا ہے،حکومت کو غریب کا احساس ہے تو مہنگائی کا طوفان کھڑا کیوں کیا:بلاول بھٹوزرداری

احتساب کے نام پر ہم سے سیاسی انتقام لیا جارہا ہے،حکومت کو غریب کا احساس ہے ...
احتساب کے نام پر ہم سے سیاسی انتقام لیا جارہا ہے،حکومت کو غریب کا احساس ہے تو مہنگائی کا طوفان کھڑا کیوں کیا:بلاول بھٹوزرداری

  

لاڑکانہ(ڈیلی پاکستان آن لائن)پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ احتساب کے نام پر ہم سے سیاسی انتقام لیا جارہا ہے،میری ایک سال سے اویس ٹپی سے کوئی ملاقات نہیں ہوئی،18ویں ترمیم کے بعد جس طرح سندھ حکومت نے کارکردگی دکھائی کسی حکومت نے نہیں دکھائی،حکومت کو غریب کا احساس ہے تو مہنگائی کا طوفان کھڑا کیوں کیا؟۔

لاڑکانہ میں وزیراعلی سندھ سید مراد علی شاہ کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہوفاقی حکومت نے ایئرپورٹ کا نام تو تبدیل کردیا، اب بی آئی ایس پی کا نام بھی تبدیل کرنا چاہتے ہیں، یہ غافل ہیں اس بات سے کہ شہید محترمہ بینظیر بھٹو عوام کے دلوں میں بستی ہیں جہاں سے انہیں کبھی نکالا نہیں جا سکتا،وفاقی حکومت کی معاشی نااہلی کا بوجھ ہر پاکستانی کو بھگتنا پڑ رہا ہے،عوام کی منتخب نمائندے کی حیثیت سے یہ انہیں ریلف دینے کی بجائے انکا جینا محال کر رہے ہیں۔ 

سندھ میں جتنی ترقی صحت کے شعبے میں ہورہی  ہے دیگر صوبوں میں نہیں ہے، سندھ حکومت نے صحت کے شعبے میں مثالی کام کیا،این آئی سی وی ڈی میں عالمی معیار کا مفت علاج کیا جاتا ہے،جو ون یونٹ چاہتے تھے وہ سمجھتے تھے کہ یہ کام نہیں کرسکتے لیکن18ویں ترمیم کے بعد جس طرح سندھ حکومت نے کارکردگی دکھائی کسی حکومت نے نہیں دکھائی،قومی ادارہ برائے امراض قلب دنیا میں دل کا مفت علاج کرنے والا سب سے بڑا ادارہ تب بنا جب 18ویں ترمیم کے بعد اسکے انتظامات سندھ حکومت کی تحویل میں آئے،شعبہ صحت میں سندھ حکومت کی بہترین کار گردی نے ون یونٹ کے حامیوں کہ منہ پر تالے ڈال دیے ۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ سندھ وہ واحد صوبہ ہے جہاں امراضِ قلب کے ہسپتال موجود ہیں ، ہم ایسے ہسپتال بنانے میں دوسروں کی مدد کرنے کو تیار ہیں، آپ آئیں ہم بتاتے ہیں ایسے ہسپتال کیسے چلائے جاتے ہیں؟۔بلاول بھٹوزرداری نے اویس مظفر ٹپی کی گرفتاری کو جھوٹ اور بے بنیاد قرار دیتے ہوئے کہاکہ اویس مظفر کی گرفتاری کی جھوٹی خبر چلانے کا مقصد عوام کو دھوکہ دینا ہے تا کہ انکی توجہ پٹرول بم سے ہٹائی جا سکے، ایسے اوچھے ہتھکنڈے حکومت کو بھاری پڑ سکتے ہیں،میری ایک سال سے اویس ٹپی سے کوئی ملاقات نہیں ہوئی۔

چیئرمین پاکستان پیپلزپارٹی نے کہا کہ احتساب کے نام پر ہم سے سیاسی انتقام لیا جارہا ہے، جب سے عمران خان کی حکومت آئی ہے مہنگائی کا سونامی آگیا ہے یہ عجیب حکومت ہے کہ جس میں وزیرخزانہ کہتا ہے کہ  ہماری معاشی پالیسیوں سے عوام کی چیخیں نکلیں گی  پھر وزیراعظم عمران خان کہتے ہیں کہ ہمیں غریبوں کا بہت خیال ہے، اگر غریب کا احساس ہے تو مہنگائی کا طوفان کھڑا کیوں کیا۔

بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ نہ دین اور نہ ہی آئین جبراََ مذہب تبدیل کروانے کی اجازت دیتا ہے،یہ ایک ناقابل قبول مسئلہ ہے جسکے حل کیلئے تمام جماعتوں کو ملکر قانون سازی کرنی ہو گی۔ 

مزید : قومی