دنیا کورونا کیخلاف جنگ میں مصروف لیکن مودی سرکار نے چپکے سے مقبوضہ کشمیر میں کیا کردکھایا؟ پاکستان کی بھی شدید مذمت

دنیا کورونا کیخلاف جنگ میں مصروف لیکن مودی سرکار نے چپکے سے مقبوضہ کشمیر میں ...
دنیا کورونا کیخلاف جنگ میں مصروف لیکن مودی سرکار نے چپکے سے مقبوضہ کشمیر میں کیا کردکھایا؟ پاکستان کی بھی شدید مذمت

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)پاکستان نے مقبوضہ کشمیرمیں آبادی کا تناسب تبدیل کرنے کی کوشش کی مذمت کرتے ہوئے کہاکہ مقبوضہ کشمیر میں آبادی کا تناسب تبدیل کرنے کی کوششیں غیرقانونی ہیں،بھارت کی جانب سے کشمیر میں غیرریاستی افراد کوآباد کرنے کے قانون کومسترد کرتے ہیں۔

واضح رہے کہ مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کو منسوخ کرنے کے تقریبا آٹھ ماہ بعد بھارتی حکومت نے ایک نوٹیفکیشن جاری کیا ہے جس کے مطابق جموں کشمیر کے نچلے درجہ کے سرکاری(نان گزیٹڈ) عہدوں پر خطے کے باشندوں کا حق ہوگا۔

ترجمان دفتر خارجہ عائشہ فاروقی نے کہاہے کہ جموں و کشمیری آرگنائزیشن آرڈر2020 عالمی قوانین کی خلاف ورزی ہے ،یہ نام نہاد آرڈر غیرکشمیریوں کو جموں و کشمیر میں بسانے کی کوشش ہے ،بھارتی اقدام عالمی قوانین اور چوتھے جنیواکنونشن کی صریحاً خلاف ورزی ہے۔

ترجمان دفتر خارجہ نے کہاکہ بھارتی اقدام 5 اگست کے غیرقانونی اقدام کا تسلسل ہے،کشمیریوں نے اس تازہ قانون کو ناقابل قراردے کر مسترد کردیا ہے ،کشمیری بنیادی حقوق اور آ بادیاتی تناسب میں تبدیلی کی کبھی اجازت نہیں دیں گے ۔

ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ بھارت عالمی وبائی صورتحال کا فائدہ اٹھانا چاہتا ہے ،دنیا کی توجہ کورونا پر مرکوز ہے ،بی جے پی ہندوتوا کے منحوس ایجنڈے پر کام کررہا ہے ،اقوام متحدہ اورعالمی برادری بھارت کے اس اقدام کا فوری نوٹس لے ۔

خیال رہے کہ مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کو منسوخ کرنے کے تقریبا آٹھ ماہ بعد بھارتی حکومت نے ایک نوٹیفکیشن جاری کیا ہے جس کے مطابق جموں کشمیر کے نچلے درجہ کے سرکاری(نان گزیٹڈ) عہدوں پر خطے کے باشندوں کا حق ہوگا۔ کشمیریوں کو چوتھے درجے کی سرکاری ملازمتیں ملیں گی،نئے قانون کے تحت نان گزیٹڈ ملازمتوں پر مقامی لوگوں کاحق تسلیم، ریاست میں پندرہ سال سے رہائش پذیر افراد بھی ملازمت کے حقدار ہونگے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق نئے قانون کے تحت نان گزیٹڈ درجہ کی ملازمتوں کو خصوصی طور پر ان لوگوں کے لئے مختص کیا گیا ہے جنہوں نے جموں و کشمیر میں 15سال تک رہائش اختیار کی ہے اور تمام مرکزی سرکاری ملازمین کے بچے جنہوں نے جموں و کشمیر میں دس سال کی مدت تک خدمات انجام دیں ہیں۔ کلاس فورتھ میں جونیئر اسسٹنٹ، کانسٹیبل جیسی پوسٹس شامل ہیں، جو گزیٹد پوسٹس کی سب سے نچلے درجے کی سمجھی جاتی ہیں۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ جموں و کشمیرکے رہائشیوں کو کلاس فورتھ اور نان گزیٹڈ پوسٹس پر خصوصی حقوق حاصل ہوں گے۔

مزید :

قومی -علاقائی -اسلام آباد -