لاہور ہائیکورٹ کاداتا دربار کے اردگردتجاوزات ختم کرنے کاحکم

لاہور ہائیکورٹ کاداتا دربار کے اردگردتجاوزات ختم کرنے کاحکم

  



لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے 24گھنٹے میں داتا دربار کے اردگردتجاوزات کے مکمل خاتمہ کا حکم دے دیا۔جسٹس علی اکبر قریشی نے اس سلسلے میں دائر درخواست پرداتادربار کی صفائی کویقینی بنانے کی ہدایت بھی کی ہے ۔دوران سماعت فاضل جج نے داتا دربار کے ارد گرد تجاوزات کا خاتمہ نہ کرنے پر ایڈمنسٹریٹر اوقاف کی سرزنش کرتے ہوئے انہیں خبر دار کیا کہ 24گھنٹے بعد داتا دربار خود جا کر تجاوزات کا جائزہ لوں گا،فاضل جج نے مزیدکہا کہ آپ لوگوں نے حد کردی ہے جو کام انتظامیہ کا ہے وہ عدالتیں کررہی ہیں۔ داتا دربار آنے والے زائرین کو خوشگوار ماحول فراہم کرنا انتظامیہ کی ذمہ داری ہے، 2کلو کی دیگ 10کلو کی کہہ کر فروخت کی جارہی ہے، تجاوزات ختم ہونے کے بعد دوبارہ کوئی ٹھیلے لگاتا ہے تو انسداد دہشت گردی دفعات کے تحت مقدمات درج کئے جائیں گے ۔درخواست گزار کی جانب سے موقف اختیار کیا گیا ہے کہ داتا دربار کے اردگرد تجاوزات کی بھرمار ہے اور لاہور کی انتظامیہ تجاوزات ختم کرنے میں ناکام ہو چکی ہے، درخواست گزار کی جانب سے استدعا کی گئی کہ عدالت تجاوزات ختم کرانے کا حکم دے،جسٹس علی اکبر قریشی نے ریمارکس دیئے کہ کہ درباروں اور مزاروں کی حفاظت حکومت کی ذمہ داری ہے، جسٹس علی اکبر قریشی نے کیس کی مزیدسماعت آج 2اگست تک ملتوی کرتے ہوئے تجاوزات ختم کرنے کا حکم دیتے ہوئے ایڈمنسٹریٹر اوقاف سے عمل درآمد کی رپورٹ طلب کرلی ہے۔

تجاوزات ختم

مزید : صفحہ آخر


loading...