313اشیا ء پرریگو لیٹری ڈیوٹی بڑھانے سے عوام پر بوجھ پر پڑے گا؛ میاں سلیم

313اشیا ء پرریگو لیٹری ڈیوٹی بڑھانے سے عوام پر بوجھ پر پڑے گا؛ میاں سلیم

  

لاہور(کامرس رپورٹر)انجمن تاجران لاہور کے جوائنٹ سیکرٹری میاں سلیم نے 313اشیا ء پرریگو لیٹری ڈیوٹی بڑھانے پر حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے اسے عوام پر اضافی بوجھ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت کے اس غیر ضروری اقدام کے باعث مہنگائی کا ایک نیا طوفان ملک کے 70فیصد غریب عوام کی محرومیوں اور مسائل میں اضافہ ہو جائے گا۔یہ بات انہو ں نے گزشتہ روز اپنے ایک بیان میں کہی ۔ میاں سلیم نے کہا کہ حکومت کے اس غیر دانشمندانہ فیصلے کے منفی اثرات ملک میں بیروزگاری ، جرائم کی شرح میں اضافہ اور غربت کے ہاتھوں تنگ افراد کی خود کشیوں میں اضافے کی صورت میں سامنے آئیں گے ۔

انہوں نے کہاکہ اگر حکومت کے محصولات کی وصولی 40 ارب روپے کم ہوئی ہے تو اس میں غریب عوام کا کیا قصور ہے ، حکومت نے جن 313 درآمدی اشیاء پر ڈیوٹی بڑھائی ہے اس کے اثرات عوام پر ہی مرتب ہونے ہیں اور اینڈ کنزیومرز مہنگائی کی چکی میں پسے گا۔انہوں نے کہاکہ دنیا بھر میں عام استعمال کی چیزوں کو سستارکھا جاتا ہے تاکہ عام آدمی پر مہنگائی کا بوجھ کم سے کم رکھا جا سکے ۔ جبکہ ہماری تاجر حکومت نے عام چیزوں کی قیمتوں پر ڈیوٹیز بڑھا کر یہ ثابت کر دیا ہے کہ یہ عوام دوست حکومت نہیں رہی ۔کیونکہ 10فیصد ڈیوٹی بڑھنے سے عام استعمال کی بہت سے چیزوں کی قیمتیں بڑھ جائیں گی دوسری جانب عام مارکیٹوں میں فروخت ہونے والی روز مرہ کے استعمال کی اشیاء کی قیمتوں کو کنٹرول کرنے کا حکومت کے پاس کوئی بھی میکنیزم موجود نہیں ہے ایک ہی علاقہ کی مارکیٹوں میں دو تین قسم کے ریٹ چل رہے ہوتے ہیں حتکہٰ عام سبزی کی دوکانوں پر فروخت ہونے والی سبزی اور پھل مارکیٹ کمیٹی کی ریٹ لسٹ سے کئی گنا زیادہ نرخوں پر فروخت ہوتے ہیں جبکہ کوئی بھی ادارہ ان دکانداروں کو پوچھنے والا نہیں اور نہ مارکیٹ کمیٹی کی ریٹ لسٹ کے مطابق سبزیاں اور پھلوں کی فروخت کو ممکن بنا سکا ہے۔ان حالات میں حکومت 10فیصد ریگولیٹری ڈیوٹی بڑھا عوام کش فیصلہ ہے جس کو عوام اور تاجربرادری مسترد کرتی ہے

مزید :

کامرس -