تہران‘دمشق میں اپنے مفادات کا ہر صورت میں تحفظ کرے گا،قربان اوغلی

تہران‘دمشق میں اپنے مفادات کا ہر صورت میں تحفظ کرے گا،قربان اوغلی

  

تہران(کے پی آئی)ایران کے ایک سابق سفارت کار نے شام کے بحران کے حوالے سے ایران اور روس کے درمیان پائے جانے والے اختلافات کی تصدیق کی ہے اور کہا ہے کہ ماسکو شام میں تہران کی قربانیوں کے ثمرات خود سمیٹنا چاہتا ہے۔ایرانی خبر رساں ایجنسی"خبر آن لائن" کو دیے گئے ایک انٹرویو میں وزارت خارجہ کے سابق ڈائریکٹر جنرل برائے امور مشرق وسطی جاوید قربان اوغلی نے کہا کہ شام کے معاملے پر ایران اور روس ایک صفحے پرنہیں۔ماسکو ایران کی قربانیوں کے ثمرات بھی خود ہی سمیٹ رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ ساڑھے چارسال کے بعد آج بھی ایران روس اور دوسرے اتحادیوں کی مدد سے شام میں صدر بشارالاسد کو اقتدار پر قائم رکھنے کی محوری حکمت عملی کو کامیابی سے آگے بڑھا رہا ہے مگر ایران اور شام کے بارے میں روس کی نیت میں فتور دکھائی دیتا ہے۔ روس کی ڈرامائی پالیسی صرف اپنے مفادات کے گرد گھومتی ہے اور وہ تہران اور دمشق کو محض اپنے مفادات کے لیے استعمال کررہے ہیں۔جاوید اوغلی کا کہنا تھا کہ شام میں صدر بشارلاسد کا اقتدار تو بچالیا گیا مگر اس کی بھاری قیمت چکانا پڑی ہے۔ پورا شام مقتل بن چکا ہے۔ ملک تباہ وبرباد ہے۔ اڑھائی لاکھ شامی شہری لقمہ اجل بن چکے اور ایک کروڑ لوگ بے گھر ہیں۔ اب مغرب اور ایران کی ملی جلی کوششوں سے بحران کے حل کے لیے کچھ پیش رفت کی جا رہی ہے۔سابق ایرانی عہدیدار کا کہنا تھا کہ شام کے بحران کے حل کے سلسلے میں ایرانی کردار تسلیم کرنا جوہری تنازع پر ہونے والے سمجھوتے کا نتیجہ ہے۔ جوہری پرگرام پر سمجھوتے کے بعد عالمی برادری کی جانب سے ایران پر اعتماد کا اظہار کیا جا رہا ہے۔

بالخصوص شام کے تنازع کے حل میں ایران کو غیرمعمولی اہمیت دی جا رہی ہے۔انہوں نے کہا کی دوسرے ویانا اجلاس میں آئندہ سال کے آغاز سے شام میں جنگ بندی اور چھ ماہ میں عبوری حکومت کے قیام جب کہ 18 ماہ میں شام میں نئے صدارتی اور پارلیمانی انتخابات کی تجاویز پر اتفاق کیا گیا تھا مگر ابھی تک اس بات پر اتفاق نہیں ہوسکا کہ آیا شام کی اپوزیشن کی نمائندگی کون کرے گا نیز بشارالاسد کا سیاسی مستقبل کیا ہوگا۔

مزید :

عالمی منظر -