نیا ٹیکس عام آدمی کا گلا گھونٹنے کے مترادف ہے، سماجی خواتین

نیا ٹیکس عام آدمی کا گلا گھونٹنے کے مترادف ہے، سماجی خواتین

  

لاہور(رپورٹنگ ٹیم )حکو مت کی جانب سے عوام پر بجٹ کے اوپر ایک نیا 40ارب روپے کا بجٹ مسلط کئے جا نے کے حوالے سے مختلف طبقہ فکر سے تعلق رکھنے والی خواتین نے شدید منفی رد عمل کا اظہار کیا ہے ،گھریلو،سیاسی،سماجی خواتین نے اسے معاشی قتل کے ساتھ ساتھ گھریلو لڑائی جھگڑوں میں اٖا ضا فہ اور عام آدمی کا گلا گھو نٹ کے مترادف قرار دیا ہے ۔اس حوالے سے گز شتہ روز روزنا مہ ’’پاکستان‘‘ میں گفتگو کر تے ہو ئے سما جی رہنما نیلم اشرف نے کہا ہے کہ موجو دہ حکمرانوں نے نہ صرف لفظی طور پر بلکہ عملی طور پر غریب آدمی سے ایک وقت کی روٹی بھی چھین لی ہے ،انہوں نے کہا کہ لگژری آئٹم پر ٹیکس لگا نا تو سمجھ میں آتا ہے لیکن اگردوسری اور کھا نے پینے کی اشیاء پر ٹیکس لگا نا تو عوام پر ظلم ہے ،انہوں نے کہا کہ حکومت فی الفور اس ٹیکس کو واپس لے ورنہ عوام سڑکوں پر نکل آئے گی ۔گھریلو خاتون و فیشن ڈیزائنر بینا سہیل نے کہا کہ حکمران کچھ تو خدا کا خوف کریں غربت و افلا س سے مجبور لو گوں کا گلا گھو نٹنے کے بجا ئے امیری و عیش و عشرت کر نے والے لو گوں کی گردنوں پر ہا تھ ڈالیں جو غریبوں کا حق کھا تے ہیں ،کھا نے پینے کی اشیاء پر ٹیکس لگا نہ تو عوام سے زیا دتی ہے جبکہ تحر یک انصاف کی رہنما وممبر پنجا ب اسمبلی سعدیہ سہیل نے کہا کہ بجٹ پر ایک اور بجٹ عام آدمی پر ڈرون حملہ ہے ،بجٹ لگژری چیزوں پر لگا یا جا تا ہے کھا نے پینے کی اشیا ء پر نہیں ،انہوں نے کہا کہ عوام پہلے ہی بجلی ،گیس کے بلوں سے تنگ ہے گھروں میں لڑائی جھگڑے ختم نہیں ہو تے ہیں اب تو کھا نا پینا بھی محال کر دیا گیا ہے انہوں نے کہا کہ حکومت ہو ش کے نا خن لے ور نہ وہ دن دور نہیں جب عوام حکو مت کو واپسی کا راستہ دیکھا ئے دے۔ٹیکس کے حوالے سے رد عمل دیتے ہو ئے مشہور بیو ٹیشن مسرت مصبا ح نے کہا ہے کہ میک اپ کی اشیاء پر ابھی چند ماہ پہلے ہی ٹیکس لگا یا گیا تھا پھر ٹیکس کے اوپر ایک ٹیکس لگا دیا گیا ہے جو کہ سرا سر ظلم وزیا دتی ہے انہوں نے کہ ایک تو پہلے ہی مہنگا ہی کی و جہ سے کسٹمر پیسے نہیں دیتا ہے اور اب تو حد ہی ہو گئی ہے انہوں نے کہا کہ حکومت اس ٹیکس کو فوری واپس لے تاکہ غریب عوام ایک وقت کا کھا نا کھا سکے ۔

مزید :

صفحہ اول -