افغان حکومت کے اندرونی اختلافات ختم کرنے کی ضرورت ہے ،پاکستان

افغان حکومت کے اندرونی اختلافات ختم کرنے کی ضرورت ہے ،پاکستان

  

 نیویارک (آئی این پی) پاکستان کی اقوام متحدہ میں مستقبل مندوب ملیحہ لودھی نے افغانستان میں سکیورٹی کی خراب ہوتی صورتحال پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ افغان حکومت میں موجود اندرونی اختلافات کو ختم کرنے کی ضرورت ہے‘ پاکستان کو دہشت گردی کے خلاف آپریشن ضرب عضب میں واضح کامیابیاں حاصل ہوئیں لیکن دہشت گردوں کے خلاف جاری اس آپریشن میں افغانستان کے عدم تعاون پر مایوسی ہوئی‘ افغانستان کے تعاون کے بغیر آپریشن کے مکمل اہداف حاصل نہیں ہوسکتے‘ عالمی برادری پاکستان میں تیس لاکھ افغان پناہ گزینوں کی واپسی کا مسئلہ حل کرے اور اس سلسلے میں اپنا کردار ادا کرے۔ وہ گزشتہ روز اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں افغانستان کی صورتحال پر مباحثے میں اظہار خیال کررہی تھیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان افغانستان میں امن و استحکام کے لئے افغانوں پر مشتمل مذاکراتی امن عمل میں معاونت کے لئے تیار ہے لیکن کابل کو پاکستان مخالف بیان بازی ختم کرنا ہوگی۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ افغان حکومت کے لئے بہتر ہے کہ وہ اپنی اندرونی کمزوریوں کو خود حل کرے افغانستان میں پائیدار استحکام کے لئے امن مذاکرات واحد حل ہیں۔ افغان قومی مصالحت افغانستان میں دہشت گرد تنظیم داعش کو داخلے سے روکنے کے لئے بہت ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ افغان جماعتیں خود عالمی رائے عامہ سے دور ہورہی ہیں۔ افغان حکومت کی امن عمل کی حمایت کے لئے متفقہ پالیسی میں کمزوریاں ہیں۔ افغان حکومت میں موجود اندرونی اختلافات کو ختم کرنے کی ضرورت ہے۔ ملیحہ لودھی نے افغانستان میں سکیورٹی کی خراب ہوتی ہوئی صورتحال پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کو دہشت گردوں کے خلاف آپریشن ضرب عضب میں واضح کامیابیاں حاصل ہوئیں لیکن افغانستان کے تعاون کے بغیر آپریشن کے مکمل اہداف حاصل نہیں ہوسکتے۔ انہوں نے دہشت گردوں کے خلاف جاری آپریشن میں افغانستان کے عدم تعاون پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے عالمی برادری پر زور دیا کہ پاکستان میں قیام پذیر تیس لاکھ افغان پناہ گزینوں کا مسئلہ حل کرے اور ان کی پرامن واپسی کے لئے اپنا کردار ادا کرے

مزید :

کراچی صفحہ اول -