امریکی فوج نے عراق میں قدم رکھا تو ہتھیار اٹھالیں گے۔۔۔ اتحادیوں نے ہی امریکا کو سب سے بڑا جھٹکا دے دیا

امریکی فوج نے عراق میں قدم رکھا تو ہتھیار اٹھالیں گے۔۔۔ اتحادیوں نے ہی ...
امریکی فوج نے عراق میں قدم رکھا تو ہتھیار اٹھالیں گے۔۔۔ اتحادیوں نے ہی امریکا کو سب سے بڑا جھٹکا دے دیا

  

بغداد(مانیٹرنگ ڈیسک) پیرس حملوں کے بعد امریکہ نے داعش سے نمٹنے کے لیے نئی حکمت اپنا لی ہے۔ اس حکمت عملی کے تحت اس نے عراق میں ایک بار پھر اپنی فوج تعینات کرنے کا اعلان کر دیا ہے اور اس کا جواز یہ پیش کیا ہے کہ وہاں سے وہ داعش کو بہتر انداز میں نشانہ بنا سکتے ہیں،مگر امریکہ کے اس اعلان پر عراق حکومت نے سخت ردعمل کا اظہار کیا ہے۔ عراقی وزیراعظم حیدرالعبادی نے کہا ہے کہ ہماری اجازت کے بغیر امریکی فوج کی عراق میں تعیناتی قابل قبول نہیں۔ عراقی حکومت کے اس ردعمل سے امریکہ اور عراق کے قریبی تعلقات پر بھی سوال اٹھنے شروع ہو گئے ہیں۔

مزید جانئے: روس کی جانب سے شام میں ایسے خطرناک ہتھیار کا استعمال کہ دنیا میں کھلبلی مچ گئی، سنگین ترین الزام لگ گیا

دوسری طرف عراق میں موجود مسلح گروپوں نے بھی امریکہ کو دھمکی دی ہے کہ اگر اس نے اپنی نئی فوج عراق میں تعینات کی تو ہم ہتھیار اٹھا لیں گے اور امریکی افواج سے جنگ لڑیں گے۔اس حوالے سے امریکی ڈیفنس سیکرٹری ایش کارٹر کا کہنا تھا کہ ہم عراق میں سپیشل فورسزعراقی حکومت کی مدد کے لیے تعینات کرنا چاہ رہے ہیں۔ ہماری یہ فوج عراقی افواج اور کرد طاقتوں کے ساتھ مل کر داعش کا مقابلہ کریں گی۔یہ سپیشل فورس چھاپے مارنے، مغویوں کو بازیاب کرانے ، خفیہ معلومات جمع کرنے اور داعش کے رہنماﺅں کو گرفتار کرنے کا کام کریں گی۔یہ فورس شام میں یک طرفہ آپریشنز بھی کرنے کی اہل ہوں گی۔

مزید :

بین الاقوامی -