تھانہ کلچر کی تبدیلی انفارمیشن ٹیکنالوجی کا استعمال ،پنجاب پولیس میں نئے پراجیکٹس اور اقدامات کو سابق آئی جیز نے مثالی قرار دے دیا

تھانہ کلچر کی تبدیلی انفارمیشن ٹیکنالوجی کا استعمال ،پنجاب پولیس میں نئے ...

لاہور(کرائم رپورٹر) پنجاب پولیس میں تھانہ کلچر کی تبدیلی کیلئے انفارمیشن ٹیکنالوجی کے موثر استعمال اور نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمد کے حوالے سے شروع کئے گئے نئے پراجیکٹس اور اقدامات کو سابق آئی جیزپنجاب نے مثالی قرار دیا ہے ۔ آئی جی پنجاب مشتاق احمد سکھیرا کی دعوت پر انسپکٹر جنرل پنجاب کے عہدے پر خدمات انجام دینے والے سابق افسران اور ایڈیشنل آئی جیز احمد نسیم ، طارق کھوسہ،چوہدری یعقوب، آصف حیات ،خواجہ خالد فاروق،طارق پرویز ، اسلم ترین اور سرمد سعید نے سنٹرل پولیس آفس کا دورہ کیا اور آئی جی پنجاب سے ملاقات کی۔ اس دوران انہیں ڈی آئی جی آپریشن پنجاب عامر ذوالفقار خان نے سنٹرل پولیس آفس میں بنائے گئے آپریشن ، مانیٹرنگ اور کنٹرول روم کے علاوہ8787کمپلینٹ سنٹراور میڈیا سیل کا دورہ کروایااورپنجاب پولیس میں حال ہی میں شروع کئے گئے آئی ٹی کے نئے پراجیکٹس اور دیگر اقدامات پر بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ پنجاب پولیس آئی ٹی اور جدید ٹیکنالوجی سے خود کو مکمل طور پر ہم آہنگ کرچکی ہے ۔ تھانہ کلچر میں تبدیلی اور عوامی سہولت کیلئے فرنٹ ڈیسک پراجیکٹ شروع کیا گیا ہے اس وقت فرنٹ ڈیسک مختلف اضلاع کے202تھانوں میں فرنٹ ڈیسک کام کررہے ہیں جس سے شہریوں کو مسائل کے حل کیلئے تاخیری حربوں سے تقریبا نجات مل گئی ہے، اسی طرح ایمرجنسی سروس 8787پر سائلین بذریعہ کال ، ایس ایم ایس اور ای میل پولیس کے خلاف اپنی شکایات کا اندراج کروارہے ہیں اب تک شہریوں نے24463 شکایتیں درج کروائی ہیں جن میں سے 19353کا ازالہ کیا جاچکا ہے جبکہ مانیٹرنگ روم میں کریمنل ریکارڈ مینجمنٹ سسٹم (CRO)، ہیومن ریسورس مینجمنٹ سسٹم، بائیو میٹرک نظام ، کرائم میپنگ، داخلی اور خارجی راستوں کی نگرانی سمیت دیگر پراجیکٹس کی مانیٹرنگ کا عملی معائنہ کروایا گیا ۔ان پراجیکٹس کو دیکھ کر سابق آئی جی صاحبان کا کہنا تھا کہ آئی جی پنجاب مشتاق احمد سکھیرا نے وقت ضائع کئے بغیر جدید ٹیکنالوجی کو اختیار کرتے ہوئے کئی سالوں پر محیط سفر کو نہایت کم عرصے میں طے کرکے پنجاب پولیس کو جدید تقاضوں سے ہم آہنگ کرلیا ہے ۔ سروس نظام میں آنے والی جدتوں کے باعث پنجاب پولیس دیگر صوبوں کیلئے مثال بن رہی ہے اور ان تمام اصلاحات کا فائدہ براہ راست عوام الناس کو ہورہا ہے اور جس تیزی سے یہ سفر جاری ہے اس سے عوام کا پولیس کے ساتھ اعتماد کا رشتہ بھی بحال ہورہا ہے ۔

مزید : علاقائی