قسمت بیگ قتل کیس میں پیشرفت،مرکزی ملزم سمیت چارگرفتار

قسمت بیگ قتل کیس میں پیشرفت،مرکزی ملزم سمیت چارگرفتار

لاہور(کرائم رپورٹر،وقائع نگار)اداکارہ قسمت بیگ کے قتل کیس میں ملوث مرکزی ملزم سمیت چارافراد کوگرفتارکرلیا ہے تفصیلات کے مطابق سی آئی اے پولیس نے گوجرانوالہ، فیصل آباد اور سیالکوٹ سے تعلق رکھنے والے مرکزی ملزم سابق شوہراورمرکزی ملزم رانامزمل، رانا تجمل ، رانا فہیم اور شاہد جنجوعہ کوگرفتار کرلیا ہے۔ ایک نیا انکشاف سامنے آیا ہے۔اداکارہ کو قتل کرنے والے گروہ کو پولیس کے ایک گروپ کی سرپرستی بھی حاصل ہے ۔پولیس کا یہ گروہ بعض پروموٹروں کے ساتھ مل کر سٹیج ڈرامے بھی کرونے کا کاروبار کرتا ہے ۔اور یہ گروہ خوبرو ڈانسر لڑکیوں کو دبئی بھجوانے کا دھندہ بھی کرتا ہے۔قسمت بیگ کو لین دین کے تنازع پر قتل کیا گیا ہے اور پولیس کو ملزمان کے نام معلوم ہو گئے ہیں ۔تاہم ایک ملز م کے سوا دیگر ملزمان کو گرفتارکرنا ابھی باقی ہے۔لاہور کے بعض پولیس افسران نے سٹیج اداکاروں سے خفیہ شادیاں بھی رچا رکھی ہیں ۔ تفصیلات کے مطابق ابتدائی تحقیقات میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ اداکارہ قسمت بیگ کو قتل کرنے والے افراد ایک گروہ کی صورت میں کام کرتے ہیں، جو مختلف اداکاروں سے پیسے وصول کرتا ہے۔ اس گروہ کے لاہور میں موجود متعدد پرڈیوسرز کے ساتھ بھی روابط کا انکشاف ہوا ہے، پرڈیوسرز حضرات اس گروہ کے ذریعے مختلف اداکاروں کو دباؤمیں لا کر اپنے مقاصد کے لیے استعمال کرتے ہیں مزید برآں گاڑی میں آنے والے حملہ آور پہلے کئی دنوں سے لاہور کے ایک پولیس انسپکٹر سے بھی رابطے میں تھے ۔جہاں پر یہ پلاننگ کی گئی کہ اداکارہ قسمت بیگ ان دنوں اونچی پرواز اڑ رہی ہے اور ان کے کہنے پر اس نے بعض سٹیج ڈرامے کرنے کا بھی وعدہ کر رکھا تھا لیکن اس نے ایک مخالف گروہ سے مل کر ان دنوں اس گروہ کے کہنے پر سٹیج ڈرامے کرنے سے انکار کر دیا جس کا انہیں رنج تھا طے یہ پایا کہ اداکارہ قسمت بیگ کو زخمی کر کے خوف زدہ کر دیا جائے اور اس کام کے لئے ایک شوٹر کی خدمات حاصل کی گئیں ذرائع کے مطابق قسمت بیگ پر حملے کا مقصد اسے معذور کرنا تھا تا کہ وہ دوبارہ ڈانس نہ کر سکے۔ دوسری جانب لاہور پولیس کے بعض ایس ایچ اوز کو بھی شامل تفتیش کر لیا گیا ہے جن میں سے ایک سے متعلق دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ اس نے قسمت بیگ سے خفیہ شادی کر رکھی تھی۔

مزید : صفحہ اول