ایڈز پر تحقیق کر نیوالے پی ایچ ڈی اور ایم فل طالب علموں کو و سکالر شپ

ایڈز پر تحقیق کر نیوالے پی ایچ ڈی اور ایم فل طالب علموں کو و سکالر شپ

لا ہور (جنرل رپورٹر) پنجاب ایڈز کنٹرول پروگرام نے ایڈز کے عالمی دن کے موقع پر پاکستان کی یونیورسٹیز میں ایڈز پر تحقیق کر نے والے پی ایچ ڈی اور ایم فل طالب علموں کو و سکالر شپ دیے۔ایڈز کے عالمی دن کے موقع پر اس تقریب کا اہتمام ایک مقامی ہوٹل میں کیا گیا جس میں پنجاب ایڈز کنٹرول پروگرام کے پروگرام ڈائریکٹر ڈاکٹر عدنان ظفر نے پی ایچ ڈی کے پندرہ اور ایم فل کے ۱۲ طالب علموں میں ریسرچ سکالر شپ دیے ۔ یہ طالب علم پاکستان کی مختلف یونیور سٹیوں میں ایڈز کے مختلف پہلووں جن میں علاج کی دریافت، ویکسینشن پر ہونے والی پیش رفت، وجوہات، تدارک، عالمی تحقیق ، پھیلنے سے روکنے کے طریقے ، اور دیگر تکنیکی امور پر تحقیق کر رہے ہیں۔ ایڈز کا عالمی دن تمام دنیا میں ایک دسمبر کو منایا جاتا ہے اور اس دن اس مہلک بیماری کے تدارک، اور دیگر پہلوووں کے بارے میں آگاہی دی جاتی ہے۔

ڈاکٹر عدنان ظفر نے بتایا کہ پنجاب ایڈز کنٹرول پروگرام اعدادوشمار ، نگرانی کے مو ثر نظام اور دوائیوں کی فراہمی کے علاوہ اس بیماری پر ہونے والی ریسرچ میں بہتری کے لیے کوشش کر رہا ہے۔ صوبے کے مختلف حصوں میں تشخیصی اور مشاورتی سنٹرز قائم کیے گیے ہیں لیکن بیماری پر قابو پانے کے لیے بہترین ریسرچ کا ہونا بہت ضروری ہے۔ اسی لیے پنجاب ایڈز کنٹرول پروگرام ریسرچ میں ہر طرح کی مدد فراہم کر رہا ہے۔ اس موقع پر پنجاب ایڈز کنٹرول پروگرام نے ملک میں اس مرض پر کام کرنے والے پروفیسرز کے تکنیکی سیشن کا بھی اہتمام کیا جس میں پروفیسر شہزاد حسن، پروفیسر شپر مرزا، اور پروفیسر سلمیٰ نے بیماری کے مختلف پہلو جن میں دواؤں کی دریافت، ویکسینیشن بنانے کے امکانات، کنٹرول اور پیچیدگیوں کے بارے میں ڈاکٹرز نے اپنی ریسرچ سے آگاہ کیا۔ڈاکٹر عدنان ظفر نے بتایا کہ پروگرام کثیر الجہتی طریقہ کا استعمال کرتے ہویے مریضوں کے اعدادو شمار اکٹھے کر رہا ہے اس مقصد کے لیے مختلف اڈوں پر قایم سنٹرز پر ڈرائیورز کی سکریننگ کا عمل جاری ہے۔ مزید براں دوسرے پروگراموں کے ساتھ ملکر ہیسپتالوں کے ضایئع شدہ مٹیریل، ڈسپوزیبل سرنجز کے استعمال ، اور دیگر ضوابط پر عملد آ مد کو یقینی بنایا جا رہا ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4