کرنسی کی قدر میں ایک روپے کے فرق سے پاکستان کو 58 ارب روپے کا نقصان پہنچتا ہے: اسحاق ڈار

کرنسی کی قدر میں ایک روپے کے فرق سے پاکستان کو 58 ارب روپے کا نقصان پہنچتا ہے: ...
کرنسی کی قدر میں ایک روپے کے فرق سے پاکستان کو 58 ارب روپے کا نقصان پہنچتا ہے: اسحاق ڈار

  


اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ عالمی معیشت میں کساد بازاری سے پاکستان سمیت ترقی پذیرممالک کیلئے خطرات موجود ہیں، کرنسی کی قدر میں ایک روپے کا فرق پاکستان کو 58 ارب روپے کا نقصان پہنچاتا ہے۔

تعلیم مکمل کرنے کے 2 سال بعد حسن نواز نے اربوں روپے کا کاروبار کیسے کرلیا؟: عمران خان

فاریکس ایسویسی ایشن کے وفد سے ملاقات کرتے ہوئے وزیر خزانہ اسحاق ڈار کا کہنا تھا کہ کرنسی اور سونے کی سمگلنگ روکنے کیلئے کریک ڈاؤن کا آغاز ہوچکا ہے جبکہ کرنسی کی سمگلنگ روکنے کیلئے ایئر پورٹس کی نشاندہی کرلی ہے جس کے بعد پالیسی اقدامات کریں گے۔بغیر لائسنس کے کرنسی ڈیلرز کےخلاف کارروائی جاری ہے ، اس آپریشن میں ایف آئی اے، ایف بی آر، سٹیٹ بینک اور آئی بی مشترکہ طور پر حصہ لے رہے ہیں۔ آپریشن کے نتیجے میں ڈالر کی قدر میں ایک روپے کی کمی ہوئی ہے۔ بہت جلد ڈالر کی قیمت میں اوپن مارکیٹ اور انٹر بینک مارکیٹ کا فرق ختم کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ عالمی معیشت میں کساد بازاری سے پاکستان سمیت ترقی پذیرممالک کیلئے خطرات موجود ہیں، کرنسی کی قدر میں ایک روپے کا فرق پاکستان کو 58 ارب روپے کا نقصان پہنچاتا ہے۔

” میرے لیے کسی لڑکی کو ایڈجسٹ کرنا بہت مشکل ہوئے گا“ بلاول بھٹوزرداری کی شاندار پیروڈی کی ویڈیو نے سوشل میڈیا پر دھوم مچادی

قبل ازیں نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی میں ورکشاپ سے خطاب کرتے ہوئے اسحاق ڈار کا کہنا تھا کہ 2013 سے پہلے ملک کو سنگین چیلنجز درپیش تھے ۔ ملک کو معاشی عدم استحکام، لوڈشیڈنگ اور سکیورٹی کے سنگین مسائل کاسامنا تھا جبکہ مہنگائی میں بہت اضافہ ہوچکا تھا اور زرمبادلہ کے ذخائر کم تھے، زراعت، صنعت اور خدمات کے شعبوں کی کارگردگی بھی خراب تھی۔

’جو نوجوان انٹرنیٹ پر فحش فلمیں دیکھتے ہیں وہ۔۔۔‘ ماہرین نے خطرے کی گھنٹی بجادی، ایسا نقصان بتادیا جو آپ نے کبھی سوچا بھی نہ ہوگا، جان کر انسان فوری توبہ کرلے

انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت ان تمام مسائل کو حل کرنے میں کامیاب ہوئی ہے مالی ڈسپلن اور استحکام کو یقینی بنایا گیا ہے، توانائی کی قلت اور مہنگائی پر قابو پانے کے اقدامات کیے ہیں۔ ٹیکس نیٹ میں اضافہ اورسبسڈی میں کمی کے اقدامات کیے ہیں، سرکاری اداروں کی تنظیم نو اور اصلاحات کی گئی ہیں۔ترقی کےلئے توانائی اور سکیورٹی صورتحال میں بہتری اہم ہوگی۔

مزید : اسلام آباد /اہم خبریں