پاکستان محمد عربی ﷺ کے دیوانوں کا ملک ، یہاں کسی اور کا راج نہیں چل سکتا ، ختم نبوت ﷺ کا عقیدہ کسی ایک گروہ کی میراث نہیں:سینیٹر ساجد میر

پاکستان محمد عربی ﷺ کے دیوانوں کا ملک ، یہاں کسی اور کا راج نہیں چل سکتا ، ختم ...
پاکستان محمد عربی ﷺ کے دیوانوں کا ملک ، یہاں کسی اور کا راج نہیں چل سکتا ، ختم نبوت ﷺ کا عقیدہ کسی ایک گروہ کی میراث نہیں:سینیٹر ساجد میر

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) امیر مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان سینیٹر پروفیسر ساجد میر نے کہا ہے کہ پاکستان محمد عربی ﷺ کے دیوانوں کا ملک ہے ، یہاں کسی اور کا راج نہیں چل سکتا ،ختم نبوت ﷺ کا عقیدہ کسی ایک گروہ کی میراث نہیں یہ ہر ایک مسلمان کے ایمان کی بنیاد ی اساس ہے،حکومت نے ختم نبوت ﷺ کے قانون کو اس کی اصل شکل میں بحال کرکے اپنا ایمان بچایا ہے۔ختم نبوت ﷺ  کا مقدس مشن سیاسی مقاصد کے لیے استعمال نہیں ہونا چاہیے ،  ریاست پر اپنی رٹ قائم رکھنے کے لیے حکومت کو اپنی ذمہ داری پوری کرنی چاہیے ،  اداروں میں فرقہ واریت کی بنیاد پر افراد کا تعین تباہ کن ہو گا ،دین ہمیں رواداری ااور ایک دوسرے کے احترام کا درس دیتا ہے ، علماء کو جارحیت کی بجائے اصلاح اور دعوت کے میدان آگے آنا ہو گا۔

یہ بھی پڑھیں:عوام آئندہ انتخابات میں چوروں کے ٹولے کاصفایا کردیں گے:جہانگیر ترین

مرکز ابوہریرہؓ  داروغہ والا میں سالانہ ختم نبوت ﷺ کا نفرنس سے خطاب کرتے ہوئےسینیٹر پروفیسر ساجد میر  نے کہا کہ پاکستان اسلام کے نام پر بنا تھا لیکن حکمران اسلام کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ بن گئے،  پاکستان کو مدینہ جیسی اسلامی ریاست بنانے کے لئے جدوجہد کی ضرورت ہے، پاک سرزمین مقدس ترین ہے اس کی حفاظت کے لئے جینا اور مرنا ہمارے ایمان کا حصہ ہے،ہم ملک میں قرآن وسنت کی بالادستی چاہتے ہی، زور بازو سے کسی ایک فرقہ کے ہاتھوں ریاستیں یرغمال نہیں بن جایا کرتیں۔ انہوں نے کہاکہ قادیانی لابی عالمی سرپرستی میں پاکستان کا آئین ختم کرنے کی ناپاک سازشوں میں مصروف ہے، قوم کو ان سازشوں کو ناکام بنانے کے لئے اختلافات سے نکل کر متحد ہوناہوگا۔ پروفیسر ساجد میر کا کہنا تھا کہ پاکستان اسلام کے نام پر بناتھا اور اس کی اول و آخر منزل اسلام ہے، جو لوگ ملک میں آئین اور نظریہ پاکستان سے بے وفائی کر رہے ہیں، وہ ملک و قوم کے خیر خواہ نہیں،جب تک ملک میں اسلامی نظام نافذ نہیں ہو جاتا اس وقت تک عوام کے مسائل حل نہیں ہوں گے، کیونکہ عوام کے مسائل کا حل صرف اسلامی نظام میں مضمر ہے ،عوام ملک میں اسلامی نظام کے قیام کے لئے جدوجہد کریں۔انہوں نے کہا کہ سلام اعتدال کا دین ہے اور پور ی انسانیت کے لئے دوستی کا پیغام ہے، دو قومی نظریہ سے نوجوانوں کو رہنمائی حاصل کرنی چاہئے، اسلام ہمارا دین ہے اور پاکستان کی بنیادمیں اسلامی نظریے کو دو قومی نظریہ نے بھرپورطریقے سے بیان کیا ہے، طاغوتی قوتوں نے مسلم دنیا کے نوجوانوں کو اپنا ٹارگٹ بنا رکھا ہے اور اسلام کا نام لینے والے نوجوانوں کو دہشت گرد قرار دے کر اسلام کو بدنام کرنے کی سازش کی جا رہی ہے۔ انکا کہناتھاکہ پاکستان میں اسلامی نظام کے سوا اور کوئی نظام چل ہی نہیں سکتا اور یہ سب کچھ آئین کا بھی حصہ ہے، جس کے لئے ہمارے آباؤاجداد نے بڑی قربانیاں دی ہیں، انگریز نے اسلامی قوانین اپنے معاشرے میں نافذ کر کے اپنے ممالک میں امن کو فروغ دیا اور ہماری بدقسمتی ہے کہ ہم نے اسلام کو چھوڑا اور انگریز کے قانون کو اپنے اوپر نافذ کر کے دہشت گردی کے چنگل میں اپنے آپ کو پھنسا دیا۔ ختم نبوت ﷺ 

کا نفرنس سے حافظ یونس آزاد ،حافظ عبدالعلیم یزدانی، مولانا محمد نعیم بٹ، میاں محمد جمیل، قاری حنیف ربانی، میاں محمود عباس ،حافظ خالد مجاہد، مولانا مشتاق فاروقی حافظ بابر فاروق رحیمی ودیگر مقررین نے بھی خطاب کیا۔

ڈیلی پاکستان کے یو ٹیوب چینل کو سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں پر کلک کریں

مزید : لاہور