جے یو آئی کے پارلیمانی لیڈر  مولانا لطف الرحمان اور سینئر نائب  امیر مولانا عبید الرحمن کے اعزاز میں عشائیہ

جے یو آئی کے پارلیمانی لیڈر  مولانا لطف الرحمان اور سینئر نائب  امیر مولانا ...

  



ڈیرہ اسماعیل خان(بیورو رپورٹ) جے یو آئی کے  ناظم حضرت علی کی جانب سے صوبائی اسمبلی میں جے یو آئی کے پارلیمانی لیڈر مولانا لطف الرحمان اور سینئر نائب امیر مولانا عبید الرحمن کے اعزاز میں عشائیہ، تحصیل سیکرٹری اطلاعات شاکر الٰہی، ناظم مالیات حاجی عبداللہ اور ڈپٹی ناظم اطلاعات نعمان الٰہی کی شرکت۔ تفصیلات کے مطابق جے یو آئی کے  ناظم حضرت علی کی جانب سے  خیبر پختونخوا اسمبلی میں  جمعیت علمائے اسلام کے پارلیمانی لیڈر مولانا لطف الرحمان اور سینئر نائب امیر مولانا عبید الرحمن کے اعزاز میں عشائیہ کا اہتمام کیا گیا۔ عشائیے میں تحصیل سیکرٹری اطلاعات شاکر الٰہی، ناظم مالیات حاجی عبداللہ اور ڈپٹی ناظم اطلاعات نعمان الٰہی، عبدالتوانوب مروت سمیت دیگر نے شرکت کی۔ اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے مولانا لطف الرحمان نے کہا کہ جے یوآئی ملک  میں جمہوریت کی بحالی کیلئے کوشاں ہے۔ نااہل سلیکٹیڈ حکومت نے ملکی سلامتی کو داؤ پر لگا دیا ہے۔ نااہل حکمرانوں کی غلط پالیسیوں کی وجہ سے عوام مہنگائی کی چکی میں پس رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جمعیت علمائے اسلام کے آزادی مارچ کے پلان اے اور بی کی کامیابی کے بعد پلان سی پر عمل جاری ہے اور ہماری تحریک نااہل حکمرانوں کو گھر بھیجنے تک جاری رہے گی۔

 اقوام ممند خیل کے 8شاخوں کا تحصیل بنوں کیساتھ منسلک ہونے کا اعلان بنوں (آ ن لائن) اقوام ممند خیل کے آٹھ شاخوں نے تحصیل بکا خیل کے ساتھ الحاق سے صاف انکار کرتے ہوئے تحصیل بنوں کے ساتھ منسلک ہونے کا اعلان کر دیا احتجاجی جرگہ نے ممبر صوبائی اسمبلی پی کے 89 کا سوشل بائیکاٹ کا بھی فیصلہ کیاممند یوتھ کور کمیٹی کے زیر اہتمام آزاد منڈی کے مقام پر اقوام ممند خیل کا گرینڈ جرگہ منعقد ہوا جس میں قبائلی مشران اور یوتھ نے کثیر تعداد میں شرکت کی، جرگہ سے خطاب کرتے ہوئے اقوام ممند خیل کے سربراہ ملک شیر غلی خان، سلویشتی امیر امیر فیروز خان، مقبول خان، اصغر خان وزیر، سابق ناظم محمد نواز، اول نور و دیگر نے کہا کہ ملک شاہ محمد خان کے ساتھ ہمارے مشیران نے آزاد منڈی کے مقام پر تحصیل بکاخیل قائم کرنے کیلئے دستخط کئے تھے ممند خیل نے تحصیل کیلئے اراضی بھی پیش کی ہے لیکن شاہ محمد خان اب تحصیل کو بکاخیل کے علاقے میں بنا رہے ہیں جو اقوام ممند خیل کو ہر گز قبول نہیں، تحصیل کے ساتھ کالج ہسپتال اور کروڑوں روپے فنڈ ہے صرف بلڈنگ ہی نہیں، ہر قوم کے قسم قسم کے مسائل ہوتے ہیں لیکن یہ تحصیل ہماری آئندہ نسلوں کا مسئلہ ہے  ہم تحصیل بنوں کیساتھ منسلک ہونا چاہتے ہیں، ایم پی اے ہمارے ساتھ تمام منصوبے میں نہ صرف نا انصافی کرتے ہیں بلکہ نظر انداز کرکے پسماندہ رکھنے پر تلے ہوئے ہیں، یہاں تک کہ ہمارے جرگہ کو بھی دھمکیاں دے رہے ہیں۔

اقوام ممندخیل 

مزید : پشاورصفحہ آخر