سرمایہ کاروں کو راغب کرنے کیلئے ون ونڈو پالیسی نا گزیر‘ پاکستان ٹیکس بار 

 سرمایہ کاروں کو راغب کرنے کیلئے ون ونڈو پالیسی نا گزیر‘ پاکستان ٹیکس بار 

  



لاہور(این این آئی)ملکی اور غیر ملکی سرمایہ کاروں کو راغب کرنے کیلئے انہیں مختلف محکموں کے درمیان شٹل کاک بنانے کی بجائے کرپشن سے پاک ون ونڈو پالیسی ناگزیر ہے، سرخ فیتے کی وجہ سے بھی سرمایہ کاری میں خاطر خواہ نتائج حاصل نہیں ہو رہے،پا کستان کے نظام سے نالاں ملکی اور غیر ملکی سرما یہ کاروں کو واپس لا نے کیلئے ان کا اعتماد بحال کیا جائے، پراپر ٹی سیکٹر پرٹیکسز کا جال پھینکا گیا تو 400ارب دبئی چلے گئے اس لئے ہمیں اپنی پالیسیوں پر نظر ثانی کرنا ہو گی اور دوستانہ ماحول پیدا کیا جائے۔ان خیالات کا اظہار پاکستان ٹیکس با رایسوسی ایشن کے سینئر نا ئب صدر قاری حبیب الرحمن زبیر ی نے ”غیر ملکی سرمایہ کاری کا رجحان“ کے موضوع پر سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر مقامی سرمایہ کاروں سمیت ٹیکس با رز کے نما ئند ے بھی مو جود تھے جنہوں نے اپنی تجاویز بھی پیش کیں۔حبیب الرحمن زبیر ی نے کہا کہ حکومت اپنی آمدن میں اضافہ اور ریو نیو کلیکشن میں بہتر ی کی خواہاں ہے تو اسے نہ صرف غیر ملکی بلکہ ملکی سر مایہ کا روں کے لئے جامع پالیسی دینا ہو گی،پاکستان کے مختلف سیکٹرز میں سر مایہ کا ر ی کرنے والوں کو سہولیات کے ساتھ ان کے لئے ٹیکس کی شرح میں بھی کمی ہونی چاہیے۔پا کستا ن کا مو جودہ نظام سرما یہ کا روں کیلئے مو زوں نہیں ہے اس لئے ابھی تک سرمایہ کاری میں خاطر خواہ نتائج حاصل نہیں ہو رہے۔انہوں نے کہا کہ پراپرٹی سیکٹر پر 2016میں لگا ئے گئے ٹیکسز سے 400ارب سے زائد سر ما یہ دبئی چلا گیا،ہمیں اپنی پالیسیوں پر نظر ثانی کرنی چاہیے اور دوستانہ ماحول کو فروغ دینا چاہیے اور مہم جوئی کی بجائے کچھ لو اور کچھ دو کی حکمت عملی مرتب کی جائے۔

اس کے علاوہ برآمدات کے مینو فیکچررز کے لئے گیس او ربجلی کے نرخ کم کر کے انہیں منجمد کیا جائے۔انہوں نے پیشکش کی کہ پاکستان ٹیکس بار ایسو سی ایشن کے سا تھ ملک بھر سے 34ٹیکس با رز کام کر رہی ہیں جو ملکی ٹیکس نظام میں بہتر لانے اور ملکی تر قی اورخو شحالی کیلئے حکومت کا ساتھ د ے سکتی ہیں۔

مزید : کامرس