پہلے نیا وزیر اعظم پھر آئین میں ترمیم، بلاول بھٹو نے آرمی چیف کی ایکسٹینشن کے معاملے پر شرط رکھ دی

پہلے نیا وزیر اعظم پھر آئین میں ترمیم، بلاول بھٹو نے آرمی چیف کی ایکسٹینشن ...
پہلے نیا وزیر اعظم پھر آئین میں ترمیم، بلاول بھٹو نے آرمی چیف کی ایکسٹینشن کے معاملے پر شرط رکھ دی

  



اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)پاکستان پیپلزپارٹی کےچیئرمین بلاول بھٹوزرداری نےکہاہےکہ پارٹی نےسابق صدرآصف زرداری کی طبی بنیادوں پردرخواست

ضمانت دائرکرنےکافیصلہ کیاہے،اُمید ہےاس کےمثبت نتائج آئیںگے،ہم آرمی ایکٹ میں ترمیم اتفاق رائے سے چاہتے ہیں لیکن وزیراعظم ایسا نہیں چاہتے ، سپریم کورٹ کےتفصیلی فیصلےکےبعدپیپلز پارٹی کاکردارمثبت ہوگا،وزیراعظم ابھی تک کنٹینرپرکھڑےہیں،اُنکےرویے کی وجہ سےملک کااورہرادارےکا نقصان ہو رہا ہے لہٰذا میں سمجھتاہوں کہ پہلے ہمارا وزیراعظم نیا ہوگا اور پھر ترمیم ہوگی۔

نجی نیوزچینل کےمطابق پمز ہسپتال میں اپنےوالدسےملاقات کےبعدمیڈیا سےگفتگوکرتےہوئےبلاول بھٹو زرداری نےکہاکہ حکومتی ڈاکٹرزنےآصف زرداری میں متعددبیماریوں کی نشاندہی کی ہے،ہمیں پاکستانی ڈاکٹرز پراعتمادنہیں ہے،آصف زرداری نےضمانت کی درخواست دینےسےروکاتھا تاہم اَب آصفہ بھٹو  نے آصف زرداری کودرخواست ضمانت کیلئےآمادہ کرلیا ہے،اَب ہم عدالت میں طبی بنیادوں پردرخواست ضمانت دائرکریں گے اورکل تک یہ درخواست ضمانت دائر ہو جائے گی،اُمید ہے کہ اِنہیں میڈیکل  بیل جلد مل جائے گی تاکہ ڈاکٹروں کے تجویز کردہ پروسیجر پر عمل کیاجاسکے،ہم چاہتے  ہیں صدر زرداری کاڈاکٹروں کے تجویز کردہ پروسیجرکے مطابق  جلد اَزجلد علاج ہو،ہم سب  صدر زرداری کی صحت کیلئے دعاگو ہیں ۔اُنہوں   نے کہا کہ صدرزرداری کیساتھ ملک کی سیاسی صورتحال پر تفصیلی گفتگو ہوئی،صدرزرداری آج بھی اپنےاصولی موقف پرقائم ہیں کہ پاکستان پیپلزپارٹی اپنے نظریے اور منشور سے سمجھوتہ  کرنے کوتیار نہیں ہے،چاہےوہ18 ویں ترمیم کی بات ہوچاہےجمہوریت کی بات ہو یا میڈیا کی آزادی کی بات ہو ؟پاکستان پیپلزپارٹی  اپنے موقف سے کسی صورت پیچھے  ہٹنے کو تیار نہیں ہے۔

اُنہوں نے کہا کہ ہمارا مظفر آباد کا جلسہ بہت کامیاب رہا،کشمیریوں  کی بہت بڑی تعداد نےجلسےمیں شرکت کی،اَب ہم نے ایک بڑا تاریخی فیصلہ کیاہے کہ  پیپلز پارٹی اِس سال27دسمبرکو شہید محترمہ بےنظیربھٹو کی برسی لیاقت  باغ راولپنڈی میں منائے گی ،یہاں سے پاکستان پیپلزپارٹی کا ایک واضح پیغام پورے ملک اور پوری دنیا کیلئے سامنے آئیگا کہ طاقت کا سرچشمہ  صرف اور صرف  عوام ہی،پی پی پی  یہ جدوجہد آخری دم  تک اوراُس وقت تک کرے گی جب تک ہم اِس ملک کی تمام تر طاقت عوام تک منتقل نہیں کردیتے۔

ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری نے کہاکہ آرمی چیف کی تعیناتی سے متعلق سپریم کورٹ کے تفصیلی فیصلےکےمنتظر ہیں،اس سے ہمیں کافی گائیڈ  لائن ملے گی،قانونی ماہرین کی رائےیہی ہے کہ آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کیلئےآئینی ترمیم لانی پڑے گی،اِس حوالے سے پاکستان پیپلزپارٹی کا کردار مثبت ہوگا،ہم چاہتے  ہیں ایک اتفاق رائے پیداہومگرایسا لگ رہاہےکہ وزیراعظم اتفاقِ رائے پیدا نہیں کرناچاہتے جیسےپہلےکشمیر ،معیشت ،جمہوریت اور گورننس پرپیدانہیں کرسکے،وزیراعظم کےکردار سےہم کوئی اُمیدنہیں رکھ سکتے،جوحکومت تین ماہ میں ایک نوٹیفکیشن نہیں بنا سکی، جو حکومت15ماہ تک ایک قانون سازی نہیں کرسکی، آئین میں ترمیم  کرنا مجھے تو بڑا مشکل لگ رہا ہے کہ حکومت چھ ماہ میں اتفاق رائے پیدا بھی کرے گی  اورترمیم بھی کرے گی،آئین میں ترمیم عمران خان کی حکومت کابہت بڑاامتحان ہوگا،ایسا لگ رہا ہےکہ وزیراعظم اپوزیشن کےساتھ اتفاق رائے نہیں چارہے،وزیراعظم نےہربات کو غیر سنجیدگی سےلیا ہے،وزیراعظم  کےکردار کی وجہ سےایک منفی اثرپڑاہے،ہم چاہتے ہیں اِس  معاملے پراَفہام و تفہیم ہو لیکن وزیراعظم  کے بیانات  اِس  کےبرعکس ہیں،ہمارا وزیراعظم غیرسنجیدہ اورہرمعاملے پرغیرسنجیدگی  کامظاہرہ  کرتاہے،آج تک یہ خان  پی ٹی آئی کالیڈر ہےملک کالیڈرنہیں ہے،آج تک وہ کنٹینرپرکھڑاہے،اِس کی وجہ سےہماری معیشت سیاست اوراداروں کوبھی نقصان پہنچ رہاہے،ہماراسلیکٹڈوزیراعظم ہرموقع پراپوزیشن جماعتوں کونشانہ بناتاہے،میں سمجھتا ہوں پہلے ہمارا نیا وزیر اعظم ہوگا پھر آئینی ترمیم ہوگی ۔

بلاول  نے کہاکہ فارن فنڈنگ کا کیس صرف تحریک انصاف  کا ہے،افسوس فارن فنڈنگ کیس کا ابھی تک کوئی فیصلہ نہیں آیا،ہمارا  کوئی فارن فنڈنگ کا کیس نہیں ہے،پیپلزپارٹی کےخلاف فارن فنڈنگ کاجھوٹا کیس بنایا گیا،پیپلزپارٹی نے فنڈنگ کے حوالے سے کچھ نہیں چھپایا۔اُنہوں نے کہا کہ  چیف الیکشن کمشنر کیلئے شہباز شریف کی جانب سے بھیجے گئے نام اپوزیشن جماعتوں کی مشاورت  سے وزیراعظم کو بھیجے گئے ہیں۔

مزید : قومی /اہم خبریں