#happybirthdaydgispr: انڈیا کی نیندیں حرام کردینے والے آصف غفور کی سالگرہ

#happybirthdaydgispr: انڈیا کی نیندیں حرام کردینے والے آصف غفور کی سالگرہ
#happybirthdaydgispr: انڈیا کی نیندیں حرام کردینے والے آصف غفور کی سالگرہ

  



راولپنڈی (ڈیلی پاکستان آن لائن) ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور کی سالگرہ کا ہیش ٹیگ سوشل میڈیا کے ٹاپ ٹرینڈز میں شامل ہے۔

میجر جنرل آصف غفور نے 1988 میں پاک فوج میں کمیشن حاصل کیا، وہ اپنی پیشہ وارانہ ذمہ داریوں کے دوران مختلف فرائض سر انجام دیتے رہے لیکن وہ اس وقت سب کی نظروں میں آئے جب انہیں آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے 15 دسمبر 2016 کو پاک فوج کا ترجمان مقرر کیا۔

میجر جنرل آصف غفور نے بطور ڈی جی آئی ایس پی آر نہ صرف پاک فوج کی بہترین انداز میں ترجمانی کی بلکہ ففتھ جنریشن وار فیئر سے بھی قوم کو آگاہ کیا۔ سوشل میڈیا پر انہوں نے پاکستانی نوجوانوں کو متحرک کیا اور انہیں دشمن کو منہ توڑ جواب دینے کے قابل بنایا۔

ڈی جی آئی ایس پی آر کی صلاحیتوں کا پورا پاکستان تو معترف تھا ہی لیکن ان کی صلاحیتوں کو اس وقت پوری دنیا تسلیم کرنے پر مجبور ہوگئی جب 26 اور 27 فروری کے واقعات پیش آئے۔ 26 فروری کو بھارت نے پاکستان میں سرجیکل سٹرائیک کا جھوٹا ڈرامہ رچایا تو وہ جنرل آصف غفور ہی تھے جو حقائق پوری دنیا کے سامنے لے کر آئے، 27 فروری کو بھی جب پاکستان نے بھارتی فوجی طیارے گرائے تو بھی ڈی جی آئی ایس پی آر کے کردار کی پوری دنیا نے تعریف کی۔ بالخصوص ان کا 26 فروری کا وہ جملہ ’ انڈیا ہمیں سرپرائز نہیں کرسکتا لیکن ہم انہیں اپنے مرضی کے وقت پر اپنی مرضی کی جگہ پر سرپرائز دیں گے‘ تاریخ میں سنہرے حروف میں لکھا جاچکا ہے۔

میجر جنرل آصف غفور کی پیشہ ورانہ مہارت کو بھارت میں بھی خوب سراہا گیا اور بھارتی فوج یہ سوچنے پر مجبور ہوگئی کہ انہیں بھی آئی ایس پی آر کی طرز پر ایک ادارہ قائم کرنا چاہیے۔ 27 فروری کو آئی ایس پی آر کے کردار کے بعد بھارتی وزیر اعظم نے یہ منظوری دی تھی کہ تینوں مسلح افواج کا ایک مشترکہ ترجمان ادارہ قائم کیا جائے گا جس کا سربراہ ڈپٹی آرمی چیف ہوگا۔

مزید : قومی /دفاع وطن /علاقائی /پنجاب /راولپنڈی