پارلیمنٹ سےمنظور شدہ انتخابی ترمیمی بل ملکی قانون بن گیا ، صدرمملکت نے دستخط کر دیئے 

پارلیمنٹ سےمنظور شدہ انتخابی ترمیمی بل ملکی قانون بن گیا ، صدرمملکت نے ...
پارلیمنٹ سےمنظور شدہ انتخابی ترمیمی بل ملکی قانون بن گیا ، صدرمملکت نے دستخط کر دیئے 

  

 اسلام آباد(ڈیلی پاکستان  آن لائن )صدرمملکت ڈاکٹر عارف علوی نے انتخابی ترمیمی بل 2021ء پر دستخط کو ایک بڑا قدم قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے دھاندلی کا خاتمہ ہو گا اور پاکستان کو جمہوری طور پر مضبوط بنانے میں مدد ملے گی،الیکشن میں بیلٹ باکس اورپریذائیڈنگ افسران غائب ہوئے تھے لیکن ووٹنگ مشین کے ذریعے الیکشن کا نتیجہ فوری عوام کے سامنے ہو گا، اوورسیز پاکستانیوں کو بھی اتنا ہی حق ہے جتنا عام پاکستانیوں کا ہے، پاکستان اس وقت ترقی کرےگا جب عام پاکستانی جدت کو اپنائے گا۔

صدرمملکت نےان خیالات کا اظہارپارلیمنٹ سےمنظور شدہ انتخابی ترمیمی بل پر دستخطوں کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ تقریب میں وفاقی وزراء سینیٹر شبلی فراز،ڈاکٹر شیریں مزاری،شفقت محمود ، اسد عمر ، علی محمد خان ،وزیر اعظم کے مشیر ڈاکٹر بابر اعوان،گورنر سندھ عمران اسماعیل اور اراکین پارلیمنٹ سمیت وزارت سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کے اعلیٰ افسران نے شرکت کی۔ صدر مملکت کی جانب سے دستخط کے بعد انتخابی ترمیمی بل 2021ء قانون بن گیا ہے، اس کے تحت بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کو بھی ووٹ کا حق دیا گیا ہے جبکہ آئندہ انتخابات میں ٹیکنالوجی کا استعمال کیا جائے گا۔

صدر ڈاکٹر عارف علوی نے انتخابی ترمیمی بل کے لئے بھرپور کوششوں اور انتھک کاوشوں پر وزیراعظم عمران خان کو مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہاکہ گزشتہ تمام انتخابات میں دھاندلی کے الزامات عائد ہوتے رہے ہیں، 2013ء کے الیکشن میں بیلٹ باکس اور پریزائیڈنگ آفیسرغائب ہوئے تھے،انتخابی ترمیمی بل 2021ءکے قانون بن جانے کے بعد انتخابی بے ضابطگیوں اور دھاندلی کو روکنے میں مدد ملے گی،موجودہ حکومت نے اقتدار میں آنے سے قبل وعدہ کیا تھا کہ وہ انتخابی عمل کو شفاف بنائے گی، ماضی میں حکومتوں کے پانچ سال دھاندلی کے الزامات کی نظر ہوجاتے تھے، نئی قانون سازی کے بعد انتخابات کا صاف اور شفاف انعقاد یقینی بنے گا،ہماری خواہش ہے کہ ملک کو آگے لے کر جائیں ، الیکٹرانک ووٹنگ مشین(ای وی ایم) کے ذریعے انتخابات کے لئے سب کو قائل کریں گے، الیکٹرانک ووٹنگ مشین سے انتخابات کے شفاف انعقاد میں سہولت ہوگی، اب ووٹرز کا بیلٹ پیپر ان کے سامنے پرنٹ ہوگا۔

صدرمملکت  نے کہا کہ الیکٹرانک ووٹنگ مشین کیلکولیٹر کی طرح کام کرتی ہے، ای وی ایم سے ووٹوں کی چوری جیسے الزامات کا خاتمہ ہوگا، اس مشین کے ذریعے فوراً نتیجہ آپ کے سامنے ہوگا، انتخابات میں اوورسیز پاکستانیوں کا بھی اتناہی حق ہے جتنا کہ عام پاکستانیوں کا ہے، ماضی میں کئی طریقوں سے انتخابی دھاندلی کی جاتی تھی، پاکستان اس وقت ترقی کرے گاجب ہم جدت کو اپنائیں گے۔

صدر مملکت نے کہا کہ وزارت سانئس و ٹیکنالوجی الیکٹرانک ووٹنگ مشین کی مینوفیکچرر نہیں ہے، اس نے پروٹوٹائپ مشین بنائی ہے، اس بات کا فیصلہ الیکشن کمیشن کرے گا کہ اسے کیسی مشین چاہئے؟ الیکشن کمیشن  کو ٹائم لائن متعین کرنی چاہئے تاکہ ای وی ایم کو حاصل کیا جائے، لوگوں کو الیکٹرانک ووٹنگ مشین پر بھروسہ کرنا چاہئے، نئی قانون سازی کے تحت بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کو بھی انٹرنیٹ ووٹنگ کے ذریعے حق رائے دہی استعمال کرنے کا حق دیا گیا ہے ، نئی الیکٹرانک ووٹنگ مشین میں ہیکنگ کا امکان کم ہے، کوئی بھی ملک نئی چیزیں تیار کر کے ترقی کرتا ہے، پاکستان اس وقت ترقی کرے گا جب ہم اپنے کام میں جدت پیدا کریں گے ، پاکستان کو ای وی ایم کے ساتھ ساتھ انٹرنیٹ ووٹنگ کی بھی ضرورت ہے۔

انہوں نے توقع ظاہر کی کہ حکومت نے عوام سے جو وعدہ کیا تھا وہ اسے پورا کرے گی تاکہ ملک کو آگے لے کر جایا جاسکے، ماضی میں پاکستان کے ہر حلقے میں دھاندلی کا الزام لگایا گیا، 2013ء میں ہمارا الزام تھا کہ ووٹ بکتے ہیں، کئی انتخابی حلقوں میں تین لاکھ اضافی بیلٹ پیپر چھاپے گئے جس پر ہم نے احتجاج کیا۔

مزید :

Breaking News -اہم خبریں -قومی -