انٹرنیٹ پر16فیصد ٹیکس لگانے سے طلبہ پر اضافی بوجھ پڑے گا،میاں کامران

انٹرنیٹ پر16فیصد ٹیکس لگانے سے طلبہ پر اضافی بوجھ پڑے گا،میاں کامران

 لاہور(جنرل رپورٹر) مسلم لیگ( ق)لاہور کے جوائنٹ سیکرٹری میاں کامران سیف نے پنجاب حکومت کی جانب سے انٹرنیٹ پر ٹیکس چھوٹ ختم کرنے پر شدید ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ذاتی شہرت کیلئے طالبعلموں میں لیپ ٹاپ تقسیم کرنے والوں کو انٹرنیٹ پر 16فیصد ٹیکس زیب نہیں دیتا ۔انہوں نے کہ حکومت شدید ترین مالی بحران کا شکار ہے اور ہر جائز ناجائز طریقہ سے عوام پر بوجھ ڈال رہی ہے حکومت ریونیو کے حصول کیلئے اب طالبعلموں کو بھی نہیں بخش رہی ۔ انٹرنیٹ پر ٹیکس چھوٹ ختم کرنے کے فیصلہ سے شعبہ تعلیم پر گہرے اثرات مرتب ہونگے اور بے چارے طالبعلموں پر بے جا مالی بوجھ پڑ جائے گا۔میاں کامران سیف نے کہا کہ انٹرنیٹ پر ٹیکس سے تجارتی و کاروباری سرگرمیاں بھی متاثر ہونگی ۔انہوں نے کہا کہ پنجاب صوبہ کے کروڑوں طالبعلم اپنی تعلیمی سرگرمیوں کے لیے نیٹ سروس کا استعمال کرتے ہیں انٹرنیٹ کی اہمیت طلبہ کیلئے کسی بھی طرح نصابی کتابوں سے کم نہیں ۔   ۔۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ انہوں نے کہا کہ معاشی بدحالی کے شکار معاشرے میں اقتصادی سرگرمیوں اور رابطوں کیلئے انٹرنیٹ کی اہمیت سے انکار نہیں کیا جاسکتا ۔انٹرنیٹ پر 16فیصد ٹیکس لگا پنجاب حکومت پورے معاشرے کیلئے مشکلات کھڑی کررہی ہے اس لیے حکومت فی الفور انٹرنیٹ پر ٹیکس عائید کرنے کا فیصلہ واپس لے ۔اگر حکومت عوام کو کوئی ریلیف نہیں دے سکتی تو تکلیف بھی نہ دے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1