ہینڈی کرافٹ تیار کرنے والی خواتین کو محنت کا پھل نہیں ملتا،کرن بشیر

ہینڈی کرافٹ تیار کرنے والی خواتین کو محنت کا پھل نہیں ملتا،کرن بشیر

  

لاہور(خبر نگار) فلاحی ادارے میسوگرومنگ سسٹم کے شعبہ دستکاری کی ڈائریکٹرکرن بشیرنے کہا ہے کہ پاکستان کی ہینڈی کرافٹ دنیا بھرمیں مشہورہیں تاہم ہینڈی کرافٹس تیارکرنے والی خواتین کو محنت کا پھل نہیں ملتا ،حکومت استحصال کا شکاران ہنرمندخواتین کو ان کی محنت کامعاوضہ دلانے کیلئے اپنا کردار ادا کرے ان خیالات کا اظہارانہوں نے گزشتہ مقامی ہوٹل میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔انہوں نے کہا کہ خواتین کوہنرمندبناکرمعاشی طورپرمضبوط کرکے معاشرے میں بڑھتی ہوئی غربت میں کمی لائی جاسکتی ہے لہذا اس سلسلے میں حکومت اپنا کردارادا کرے ۔انہوں نے کہا کہ پاکستانی خواتین بے پناہ صلاحیتوں کی مالک ہیں ان کی بنائی ہوئی ہینڈی کرافٹس کی امریکا ،کینیڈا ،برطانیہ ،جرمنی ،اٹلی ،سپین،دبئی اورآسٹریلیا سمیت دنیا کے دیگرممالک میں بڑی مانگ ہے ۔ ۔ ۔ ۔  لیکن بدقسمتی سے انتھک محنت کرنے والی یہ خواتین اچھے معاوضے سے محروم ہیں اگران خواتین کوان کی محنت کا صلہ ملے تو اس شعبے میں پاکستان کا نام مزید روشن ہوسکتا ہے ۔انہوں نے ہینڈی کرافٹس کی بڑھتی ہوئی سمگلنگ پرگہری تشویش کا اظہارکرتے ہوئے کہا کہ ہینڈی کرافٹس کی سمگلنگ سے ملک کوسالانہ اربوں روپے کا نقصان ہورہا ہے اگرحکومت ہینڈی کرافٹس کی سمگلنگ کی روک تھام کیلئے ہنگامی بنیادوں پرعملی اقدامات کرے تو اس سے ملک کی معیشت کوبہتربنایا جاسکتا ہے ۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -