4 ہزار بچے دل کی سر جری کیلئے 9سال انتظار کرینگے

4 ہزار بچے دل کی سر جری کیلئے 9سال انتظار کرینگے

 لاہور(جاوید اقبال)چلڈرن ہسپتال میں دل کے عارضہ میں مبتلا 4ہزارمستقبل کے معماردل کے آپریشن کیلئے انتظار کی سولی پر لٹک گئے ہیں۔روٹین کیٹیگری میں 4ہزار ایسے بچوں کو ویٹنگ لسٹ میں رکھا گیا ہے جن کے دلوں کے آپریشن کیے جانے ہیں وسائل کی کمی کے باعث ان کی ویٹنگ لسٹ 2023میں داخل ہو گئی ہے۔ہسپتال انتظامیہ نے قوم کے ایسے معمارجن کے دل کی سرجری یا انجیوپلاسٹری ہونا ہے ان کو تمام تر سہولیات فراہم کی ہوئی ہیں اور اس کیلئے بچوں کو تین در جات میں تقسیم کیا ہو ا ہے۔مگر اس کے با وجود ان بچوں میں سالانہ ایک ہزار سے 15سو تک اضافہ ہو رہا ہے۔بتایا گیا ہے کہ چلڈرن ہسپتال میں دل کے ہر روز بائی پاس آپریشن ہو رہے ہیں۔اینجیو گرافی اور اینجیو پلاسٹی بھی ہوتی ہے۔جنوری 2015میں ایسے بچے جن کو دل کی سرجری کی ضرورت ہے اور انہیں انتظار میں رکھا گیا ہے ان کی تعداد چار ہزار سے تجاوز کر گئی ہے۔ہسپتال کی انتظامیہ تمام تر وسائل استعمال کرنے کے باوجود سالانہ 5سے ساڑھے 5سو بچوں کے دل کے آپریشن کر پاتی ہے۔صرف چلڈرن ہسپتال میں جو بچے رجسٹرڈ ہو رہے ہیں ان میں ایک ہزار سے 15سو بچوں کا سالانہ اضافہ ہو رہا ہے۔اگر مذکورہ اوسط سے آپریشن ہوتے رہے تو ویٹنگ لسٹ 2028تک جا سکتی ہے اس حوالے سے ہسپتال کے چیف ایگزیکٹو اور معروف پروفیسر آف پیڈز کارڈیالوجی ڈاکٹر مسعود صادق سے بات کی گئی تو انہوں نے بتایا کہ چلڈرن ہسپتال عارضہ قلب میں مبتلا بچوں کو وسائل سے بڑھ کر عالمی معیار کی سہولیات فراہم کی جا رہی ہیں اس وقت 5سو سے ساڑھے 5سو بچوں کے سالانہ کی بنیاد پر آپریشن کئے جاتے ہیں۔مگر سالانہ بنیادوں پر ایک ہزار سے 15سو بچوں کا اضافہ ہو رہا ہے۔لہذا انہوں نے کہا کہ کارڈٖیا لوجی عمارت تکمیل کے آخری مرحلے میں ہے اس کی تکمیل سے وسائل ڈبل ہو جائیں گے۔جس کے بعد ایک سے تین آپریشن تھیٹر ہو جائیں گے اور سالانہ بنیادوں پر 11سے12سو بچوں کے دل کا آپریشن کیا جا سکے گا۔پروفیسر مسعود صادق نے کہا کہ ہم نے دل کے عارضہ میں مبتلا بچوں کو تین کیٹیگریز میں تقسیم کر رکھا ہے ۔پہلی کیٹیگری ایمر جنسی ہے،دوسری پرائرٹی اور تیسری روٹین کیٹیگر ی ہے اس طریقہ کار کے تحت پہلے سے بہت بہتری آئی ہے ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1