یورپی ملک میں 3 افغان مہاجرین نے نوجوان لڑکی کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا، پھر اس حرکت کی ایسی وجہ بتادی کہ سن کر جج کا بھی منہ کھلا کا کھلا رہ گیا، کوئی سوچ بھی نہ سکتا تھا کہ۔۔۔

یورپی ملک میں 3 افغان مہاجرین نے نوجوان لڑکی کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنا ...
یورپی ملک میں 3 افغان مہاجرین نے نوجوان لڑکی کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا، پھر اس حرکت کی ایسی وجہ بتادی کہ سن کر جج کا بھی منہ کھلا کا کھلا رہ گیا، کوئی سوچ بھی نہ سکتا تھا کہ۔۔۔

  

ویانا(مانیٹرنگ ڈیسک) آسٹریا میں تین افغان پناہ گزین لڑکوں نے ایک مقامی لڑکی کو اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنا دیا اور جب پولیس نے گرفتار کرکے تفتیش کی تو اپنے جرم کا ایسا جواز پیش کر دیا کہ آپ بھی سن کر حیران رہ جائیں گے۔ برطانوی اخبار ڈیلی سٹار کی رپورٹ کے مطابق ملزمان میں سے 2کی عمریں 17جبکہ ایک کی 16سال تھی۔ انہوں نے آسٹریا کے دارالحکومت ویانا میں پریٹرسٹرن ریلوے سٹیشن کے قریب ایک طالبہ کا پیچھا کیا۔ جب وہ ایک پبلک ٹوائلٹ میں داخل ہوئی تو انہوں نے اس پر حملہ کر دیا اور زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا۔

وہ استانی جو اپنے سے 13سال کم عمرطالبعلم کےساتھ شرمناک کام کرنے کے بعد اسے خاموش رکھنے کے لئے ایسا کام کرتی رہی کہ جان کر آپ بھی چکراجائیں گے

رپورٹ کے مطابق جب ملزمان کو گرفتار کیا گیا تو انہوں نے ’کمال معصومیت‘کا مظاہرہ کرتے ہوئے کہا کہ ”ہمیں تو معلوم ہی نہیں تھا کہ یہ کام یہاں غیرقانونی ہے۔“بعدازاں انہیں عدالت میں پیش کر دیا گیا جہاں ایک لڑکے کا کہنا تھا کہ ”ہم نے شراب پی رکھی تھی، مجھے تو یہ بھی نہیں معلوم کہ ہم نے لڑکی سے زیادتی کیوں کی۔“ 16سالہ ملزم نے عدالت میں بھی وہی بیان دیا کہ ”ہم نے یہ کام کرکے کوئی قانون نہیں توڑا۔“ عدالت کی طرف سے 17سال عمر کے دونوں مجرموں کو 6سال جبکہ 16سالہ مجرم کو 5سال قید کی سزا سنا کر جیل بھجوا دیا گیا ہے۔

مزید : بین الاقوامی