نقیب اللہ کیس ،راؤانوار سے خون بہا لینے کا امکان مسترد ،صلح اور ثالثی کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ،دیت لینے کی خبریں بھی بے بنیاد ہیں :قبائلی اراکین پارلیمنٹ

نقیب اللہ کیس ،راؤانوار سے خون بہا لینے کا امکان مسترد ،صلح اور ثالثی کا ...
نقیب اللہ کیس ،راؤانوار سے خون بہا لینے کا امکان مسترد ،صلح اور ثالثی کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ،دیت لینے کی خبریں بھی بے بنیاد ہیں :قبائلی اراکین پارلیمنٹ

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)قبائلی اراکین پارلیمنٹ سینیٹر مولانا صالح شاہ اور ممبر قومی اسمبلی مولانا جمال الدین محسود نے نقیب اللہ قتل کیس میں روپوش معطل ایس ایس پی راؤ انوار سے خون بہا لینے کے امکان کو یکسر مسترد کرتے ہوئے واضح کیا ہے کہ قبائلیوں کی اپنی روایات ہیں اور اب یہ صرف قبائل نہیں بلکہ سارے پاکستانیوں کے تحفظ کا مسئلہ بن گیا ہے ، صلح یا ثالثی کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ،دیت کی بات چیت میں کوئی حقیقت نہیں ہے ،بے بنیاد اطلاعات کے ذریعے اس مسئلہ اور احتجاج سے توجہ ہٹانے کی کوشش کی جارہی ہے ۔

تفصیلات کے مطابق سینیٹر صالح شاہ نے واضح کیا کہ راؤ انوار سمیت کسی پولیس افسر سے نقیب اللہ قتل کیس میں دیت کے معاملے پر بات چیت نہیں ہورہی، بے بنیاد باتیں پھیلائی جارہی ہیں، دیت کی اطلاعات جھوٹ پر مبنی ہیں، میں خود جرگے کا حصہ ہوں اور ہم اس گھناؤنے جرم میں خون بہا لینے کا تصور بھی نہیں کرسکتے ، نقیب اللہ قتل کیس کے بدلے چاہے،ہمیں سارا اسلام آباد دے دیں پھر بھی یہ مقدمہ واپس لینے پر تیار نہیں ہوں گے، قبائل کی اپنی روایات ہیں اور اب تو یہ صرف قبائل نہیں، سارے پاکستان کے شہریوں کا مسئلہ بن گیا ہے۔جنوبی وزیر ستان سے قبائلی رکن قومی اسمبلی  مولانا جمال الدین محسود  نے بھی واضح کیا کہ جعلی پولیس مقابلے میں نقیب اللہ محسود کے قتل میں خون بہا لینے کا تصور بھی نہیں کرسکتے یہ ناممکن ہے قبائل کا احتجاج جاری ہے۔

مزید : قومی