جاوید ہاشمی جھوٹے اور من گھڑت بیانات دے رہے ہیں :لیفٹیننٹ جنرل (ر) طارق خان

جاوید ہاشمی جھوٹے اور من گھڑت بیانات دے رہے ہیں :لیفٹیننٹ جنرل (ر) طارق خان

 لاہور(خصوصی رپورٹ)سابق کور کمانڈر لیفٹیننٹ جنرل (ر) طارق خان نے کہا ہے کہ جاوید ہاشمی نامی سیاستدان نے یہ بات اپنے ذمے لے لی ہے کہ وہ میرے خلاف یہ الزام لگاتے رہیں کہ اپنی سروس کے دوران میں کسی قسم کی فوجی بغاوت کی منصوبہ بندی کر رہا تھا۔ وہ ماضی میں بھی ایسی باتیں کہتے رہے لیکن میں ان کے ان بچگانہ بیانات کو اس بنیاد پر نظرانداز کرتا رہا کہ ہارٹ اٹیک کے بعد ان کی دماغی صحت اس قابل نہیں کہ انہیں معلوم ہو کہ وہ کیا کہہ رہے ہیں۔ ان کی عمر ایک دوسرا سبب ہے لیکن انہوں نے اپنی الزام تراشی کی روش جاری رکھی ہوئی ہے بلکہ اب پہلے سے بدتر صورتحال ہے۔ اگر یہ صرف میری ذات کا معاملہ ہوتا تو میں اس معاملے کے خود ہی رفع دفع ہونے کا انتظار کرتا جیسا کہ اس طرح کی احمقانہ باتیں ہمیشہ ہو جاتی ہیں لیکن اس سارے معاملے کا تعلق ایک پورے ادارے سے ہے اور ان بیانات کا مقصد اس کی لیڈر شپ کو بلاوجہ بدنام کرنا اور عوام کی نظروں میں گرانا ہے اس لئے اب میں جواب دینے کی ضرورت محسوس کر رہا ہوں۔ میں نے متعلقہ حکام سے پہلے ہی کہا ہے کہ وہ باقاعدہ طریقے سے سرکاری طور پر اس معاملے سے نپٹیں اور انہوں نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ وہ ایسا کریں گے۔ یہ کہہ دینا ہی کافی ہوگا کہ جو شخص مہران سکینڈل میں ملوث رہا ہو اور فوج کو بدنام کرنے کے الزام میں غداری کیس میں جیل میں سزا کاٹ چکا ہو، وہ اپنی عادت سے مجبور ہے اور اپنے ذاتی کردار کی پستی کی بنیاد پر ایسا کر رہا ہے۔ اپنے مشکوک اخلاقی مقام کے باعث وہ ایسے فیصلے سنا رہا ہے جس کی بنیاد اس کے اپنے کم تر معیار ہیں، میں سب کو آگاہ کرنا چاہتا ہوں کہ میں اس آدمی (جاوید ہاشمی) کو جانتا تک نہیں اور نہ ہی مستقبل میں میری اسے جاننے کی کوئی خواہش ہے بلکہ میں نے زندگی بھر کسی سیاستدان کے ساتھ کوئی جان پہچان پیدا نہیں کی اور نہ ہی کسی شخص کے ساتھ جو سیاست میں ہو کبھی کسی معاملے پر بات کی ہے۔ میں پوری زندگی کبھی کسی سیاستدان کے گھر نہیں گیا اور نہ کسی کو اپنے گھر بلایا۔ میں نے کبھی کسی ایسی تقریب، شادی بیاہ یا جنازے میں بھی شرکت نہیں کی جہاں سیاستدان شریک اور جمع ہوں۔ ایسا میں اس لئے نہیں کرتا کہ میں سیاستدانوں کو اپنے سے کم تر سمجھتا ہوں بلکہ محض اس وجہ سے کہ اپنی زندگی اور اس کے ضابطۂ حیات کے دوران مجھے سیاستدانوں کے ساتھ راہ و رسم رکھنے کی کبھی ضرورت ہی محسوس نہیں ہوئی۔ اس لئے جاوید ہاشمی جو نت نئی کہانیاں سنا رہے ہیں وہ ان کے دماغ کی اختراع ہیں اور میں حیران و ششدر ہوں کہ میڈیا پر جاوید ہاشمی کی ذہنی صحت کا غلط استعمال کیا جا رہا ہے۔ یہ جھوٹ و اختراع کا سادہ سا کیس ہے، بچگانہ الزامات ہیں جو محض اس لئے گھڑے جا رہے ہیں کہ ان من گھڑت بیانات سے فوج کو بدنام کیا جائے۔ اگر اس شریف آدمی کی ذہنی صحت درست ہے تو پھر اس کے الزامات اسے ایک ایسا جھوٹا شخص ثابت کرتے ہیں جسے اپنی عزت کا بھی پاس لحاظ نہیں۔ میں چاہوں گا کہ سرکاری سطح پر اس معاملے کی تحقیقات کرائی جائے تاکہ اس شخص کی فضول باتوں کا خاتمہ ہوسکے۔

لیفٹیننٹ جنرل (ر) طارق خان

مزید : صفحہ اول