چین میں ایک 2300 سال پرانے مقبرے سے ایسی چمکتی ہوئی چیز برآمد کہ دیکھ کر سائنسدان بھی ششدر رہ گئے، کسی نے سوچا بھی نہ تھا کہ۔۔۔

چین میں ایک 2300 سال پرانے مقبرے سے ایسی چمکتی ہوئی چیز برآمد کہ دیکھ کر ...
چین میں ایک 2300 سال پرانے مقبرے سے ایسی چمکتی ہوئی چیز برآمد کہ دیکھ کر سائنسدان بھی ششدر رہ گئے، کسی نے سوچا بھی نہ تھا کہ۔۔۔

  

بیجنگ (نیوز ڈیسک) زمین میں دفن ہو جانے والی اشیاءکو مٹی میں مل کر مٹی بنتے دیر نہیں لگتی، لیکن چین کے ایک قدیم مقبرے سے ہزاروں سال پرانی ایک شے یوں چمکتی ہوئی برآمد ہوئی کہ سب دیکھتے ہی رہ گئے۔

اخبار دی مرر کی رپورٹ کے مطابق ماہرین آثار قدیمہ نے شینانگ شہر میں کھدائی کے دوران متعدد قدیم اشیاءدریافت کیں جن میں ایک تلوار بھی شامل تھی۔ یہ تلوار نیام کے اندر ہی تھی اور ماہرین کا خیال تھا کہ 2300 سال بعد اسے نیام سے نکالنا آسان کام نہ ہوگا۔ حفاظتی دستانے پہنے ہوئے ایک ماہر نے نہایت احتیاط کے ساتھ تلوار کو نیام سے باہر کھینچنے کی کوشش کی تو اسے حیرانی ہوئی کہ یہ آرام سے باہر آگئی۔ اگلے ہی لمحے سب دیکھنے والوں کی آنکھیں حیرت سے پھٹی کی پھٹی رہ گئیں کیونکہ یہ تلوار یوں چمک رہی تھی گویا ابھی تیار کی گئی ہو۔

فرعون کی قبر سے خنجر برآمد، یہ خنجر کیسے بنایا گیا؟ زمین کی کسی چیز سے نہیں بلکہ۔۔۔ ایسا انکشاف جو سائنسدانوں نے کبھی خوابوں میں بھی نہ سوچا، ہر کوئی دنگ رہ گیا

ماہرین کا کہنا ہے کہ انہوں نے ایسا منظر پہلے کبھی نہیں دیکھا کہ قدیم زمانے کی اشیاءاس قدر اچھی حالت میں دریافت ہوئی ہوں۔ عموماً چند سوسال قدیم اشیاءبھی جب دریافت ہوتی ہیں تو ان کی حالت خاصی خراب ہوچکی ہوتی ہے۔

تحقیق کاروں کا خیال ہے کہ یہ تلوار 475 قبل مسیح سے لے کر 221قبل مسیح کی زو سلطنت سے تعلق رکھتی ہے۔ زو سلطنت کے اڑھائی سو سال اس کی 8ریاستوں کے درمیان مسلسل جنگوں کے سال کہلاتے ہیں۔ قدیم چین کی اس سلطنت کی تمام ریاستوں میں اسلحہ سازی کا فن عروج پر تھا۔ یہ لوگ تیر، تلوار، نیزے ، ڈھال اور بھالے سمیت ہر قسم کے ہتھیار بنانے میں ماہر تھے۔ چمکتی تلوار سے پہلے بھی اس دور کی متعدد اشیاءدریافت ہو چکی ہیں، جن میں سے بیش تر چین کے نیشنل میوزیم کی زینت بن چکی ہیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس