آرمی ایکٹ میں ترمیم کا معاملہ، پیپلز پارٹی نے دوسری جماعتوں کو بھی اعتماد میں لینے کا بیڑا اٹھالیا

آرمی ایکٹ میں ترمیم کا معاملہ، پیپلز پارٹی نے دوسری جماعتوں کو بھی اعتماد ...
آرمی ایکٹ میں ترمیم کا معاملہ، پیپلز پارٹی نے دوسری جماعتوں کو بھی اعتماد میں لینے کا بیڑا اٹھالیا

  



اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے حکومتی وفد سے مذاکرات کے بعد آرمی ایکٹ میں ترمیم کے معاملے پر دوسری سیاسی جماعتوں کو بھی اعتماد میں لینے کا اعلان کردیا۔

پیپلزپارٹی اور حکومتی وفد کے درمیان آرمی ایکٹ میں ترمیم کے حوالے سے ہونے والی بات چیت کی اندرونی کہانی سامنے آگئی۔ مذاکرات کے دوران بلاول بھٹو نے حکومتی وفد سے پارلیمانی قواعد و ضوابط پر عمل درآمد پر زور دیا اور کہا کہ آرمی ایکٹ میں ترمیم سے متعلق پارلیمانی قواعد و ضوابط کو بروئے کار لایا جائے۔ملاقات میں راجہ پرویزاشرف، نیئر بخاری، شیری رحمان، رضا ربانی اور شازیہ مری بھی موجود تھے۔

حکومتی وفد سے ملاقات کے بعد اپنے ایک ٹویٹ میں چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ حکومتی کمیٹی کے اراکین آئندہ ہونے والی قانون سازی پر بات چیت کےلئے زرداری ہاو¿س آئے تھے، کچھ سیاسی جماعتیں قانون سازی کے قواعد و ضوابط کو بالائے طاق رکھنا چاہتی ہیں،پیپلز پارٹی جمہوری قانون سازی کو مثبت طریقے سے کرنا چاہتی ہے۔جتنی اہم قانون سازی ہے ، اتنا ہی اہم ہمارے لیے جمہوری عمل کی پاسداری ہے۔ چیئرمین پیپلز پارٹی نے اعلان کیا کہ پیپلز پارٹی اس معاملے پر دوسری سیاسی جماعتوں کو بھی اعتماد میں لے گی۔

واضح رہے کہ اس سے قبل مسلم لیگ ن کے پنجاب رانا ثناءاللہ نے میڈیا سے گفتگو میں اس بات کا اعلان کیا تھا کہ ن لیگ آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کے حوالے سے آرمی ایکٹ میں کی جانے والی ترمیم پر حکومت کے ساتھ غیر مشروط حمایت کرے گی۔

مزید : Breaking News /اہم خبریں /قومی