ریلوے کا لونیوں کے مکینوں کا لوڈشیڈنگ کے خلاف مظاہرہ

ریلوے کا لونیوں کے مکینوں کا لوڈشیڈنگ کے خلاف مظاہرہ

لاہور (سٹاف رپورٹر) ریلوے ملازمین کی درجہ چہارم کی رہائشی کالونیاں غیر اعلانیہ بجلی کی طوفانی لوڈشیڈنگ کے نرغے میں ہیں جس کے باعث ملازمین کی نیندیں اور سکون چھین گیا ہے اور 8 سے 12 گھنٹے تک ورکشاپوں اور ڈویژنوں میں فرائض سرانجام دینے والے ملامین نفسیاتی مریض بن گئے ہیں۔ ریلوے کالونیوں میں ایک ایک گھنٹے کے بعد غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ ہو رہی ہے جس پر گزشتہ روز 5 سو سے زائد ریلوے کالونیوں کے ملازمین نے مغلپورہ روڈ اور گڑھی شاہو پل کے پاس شدید احتجاج کیا۔ احتجاج میں خواتین، بچے، بوڑھے اور ریلوے ملازمین کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔ مظاہرین نے ہاتھوں میں کتبے، پلے کارڈز اور بینرز اٹھا رکھے تھے جن پر بجلی دو اور پانی دو کے نعرے درج تھے۔ مظاہرین نے گڑھی شاہو پل کے پاس احتجاج کرتے ہوئے روڈ بلاک کر دی اور ٹریفک جام کر دی جس کی وجہ سے گاڑیاں کئی گھنٹے تک پھنسی رہیں اور شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ مظاہرین نے بتایا کہ پہلے ریلوے ملازمین کی درجہ چہارم کی کالونیوں میں غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ نہیں ہوئی تھی جبکہ وفاقی حکومت نے بھی یقین دہانی کرائی ہے کہ غیر اعلانیہ بجلی کی لوڈشیڈنگ نہیں ہو گی مگر یہاں ریلوے کالونیوں کے ہاتھ امتیازی سلوک برتا جا رہا ہے۔ ملٹری بیرنگ ریلوے کالونی، وحید کالونی، وارث کالونی، پاور ہاو¿س کالونی، باجہ لائن کالونی، ٹینکی محلہ، سنگھ پورہ ریلوے کالونی، ریلوے واشنگ لائن کالونی، گیس کالونی سمیت دیگر ریلوے کی درجہ چہارم کی کالونیوں میں بجلی کی بدترین لوڈشیڈنگ کی جا رہی ہے۔ ملازمین کا کہنا ہے کہ سارا دن ریلوے ورکشاپوں میں لوہا پگھلانے والی مشینوں کے سامنے کام کرتے ہیں جب رات کو گھر جاتے ہیں تو انہیں وہاں بھی سکون نہیں ملتا۔ اتوار کے روز دیکھا گیا کہ ریلوے کی گیس کالونی، واشنگ لائن کالونی، باجہ لائن، سنگھ پورہ اور ملٹری بلاک ریلوے کالونی کے ملازمین بجلی سے ستائے سڑکوں پر نکل آئے اور انہوں نے سینا کوبی شروع کر دی ۔ ملازمین سڑک پر ہی لیٹ گئے اور ذمہ داران کو بد دعائیں دینے لگے۔ بتایا گیا ہے کہ ریلوے کی کالونیوں میں رات دس بجے کے بعد سے صبح تک لوڈشیڈنگ کا سلسلہ جاری رہتا ہے اگر دس بجے بجلی جاتی ہے تو واپسی کا کوئی پتہ نہیں ہوتا بعض اوقات 12 بجے رات کو آتی ہے تو پھر سڑکیں دس سے پندرہ منٹ کے بعد دوبارہ چلی جاتی ہے اور یہ سلسلہ رات سے صبح تک جاری رہتا ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1


loading...