نیٹو سپلائی کرنے کی کوشش ہوئی تو اسلام آباد لانگ مارچ نہیں روکا جاسکے گا :دفع پاکستان کونسل

نیٹو سپلائی کرنے کی کوشش ہوئی تو اسلام آباد لانگ مارچ نہیں روکا جاسکے گا :دفع ...

کراچی(ثنانیوز) دفاع پاکستان کونسل کے رہنماﺅں نے نیٹو سپلائی کی ممکنہ بحالی پر حکومت کومتنبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ نیٹو سپلائی کی بحالی کی کوشش کی گئی تو اسلام آباد لانگ مارچ نہیں روک سکے گا ۔ نیٹو سپلائی بحالی کسی صورت برداشت نہیں کریں گے۔ دفاع پاکستان کونسل کا یہی مقصد ہے کہ ملک کے دفاع کیلئے اپنا کردار ادا کرے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے دفاع پاکستان کونسل کے تحت ادارہ نور حق میں منعقدہ کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ کنونشن سے امیر جماعت الدعوة حافظ سعید‘ امیر جماعت اسلامی صوبہ سندھ اسد اللہ بھٹو‘ جمعیت علمئاے اسلام (نظریاتی) کے مرکزی امری اور ایم این اے عصمت اللہ ‘ جمعیت اتحاد العلماءکے قاری ضمیر اختر منصوری ‘ مسلم لیگ شیر بنگال کے ڈاکٹر صالح ظہور‘ انصار الامتہ کے مولانا عزیز الرحمن ‘ عوامی مسلم لیگ کے محفوظ یار خان ایڈووکیٹ‘ امیر جماعت اسلامی کراچی محمد حسین محنتی‘ نائب امیر برجیس احمد اور ڈپٹی سیکرٹری مسلم پرویز نے بھی خطاب کیا۔ کنونشن میں کارکنان اور عوام کی بڑی تعداد شریک تھی۔ کنونشن میں محمد حسین محنتی نے اعلامیہ بھی پڑھ کر سنایا جس کی شرکاءنے ہاتھ اٹھا کر تائید کی ۔ مولانا سمعی الحق نے کہا کہ ہمارے حکمران امریکہ کے غلامبنے ہوئے ہیں ۔ آئے دن ڈرون حملے ہوتے ہیں اور حکمران تماشائی بنے ہوئے ہیں۔ یہ اقوام متحدہ کے پاس کیوں نہیں جاتے؟ ہم انشا ءاللہ نیٹو سپلائی کسی صورت میں بحال نہیں ہونے دیں گے اور ڈرون حملے بھی بند کرائیں گے۔ مولانا سمیع الحق نے کہا کہ ملک بالخصوص کراچی میں دہشت گردی وقتل غارت کا سلسلہ جاری ہے۔ سپریم کورٹ کی نشاندہی کے باوجود حکمران جماعتوں نے قتل وغارت گری روکنے کیلئے کوئی اقدامات نہیں کئے۔ مولانا سمیع الحق نے برما میں مسلمانوں کے قتل عام پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ دفاع پاکستان کونسل اس قتل عام کے خلاف ہر سطح پر آواز اٹھائے گی۔ حافظ سعید نے کہا کہ پاکستان کا امریکہ کے ساتھ سٹرٹیجک پارٹنر شپ کا فیصلہ غلط تھا۔ حکمران اپنی غلطی کو تسلیم کرلیں اور امریکہ کو اس خطے میں پلٹنے پر مجبور کیا جئاے۔ اس غلط فیصلے کی وجہ سے صرف ملکی معیشت تباہ ہوئی بلکہ بڑے پیمانے پر جان ومال کا بھی جانی نقصان ہوا۔ اللہ تعالیٰ سے بغاوت پر مبنی اس فیصلے کی سزا آج پوری قوم بھگت رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ دنیا بھر میں لوگوں کو مسلمان ہونے کی سزا دی جارہی ہے۔ برما کے مسلمانوں کو نسل کشی بھی اسی سلسلے کی کڑی ہے۔ اس صورتحال میں مسلمانوں کا اتحاد اور جہاد وقت کی اہم ضرورت ہے۔ ہمارے حکمران سیاسی مصلحتوں اور محض بیانات پر اکتفا کر رہے ہیں۔ حافظ سعید نے کہا کہ پاکستان مزید نقصانات کا متحمل نہیں ہوسکتا۔

مزید : صفحہ آخر


loading...