موجودہ حکمرانوں نے قومی ایکشن پلان کی روح کو ختم کر دیا: طاہرالقادری

موجودہ حکمرانوں نے قومی ایکشن پلان کی روح کو ختم کر دیا: طاہرالقادری

لاہور(خبر نگار خصوصی)پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ محمد طاہر القادری نے کہا کہ سفاکیت کا نام جمہوریت رکھ دیا گیا ،ایکشن پلان کی ڈائریکشن تبدیل اور سیاسی مخالفین کی ٹارگٹ کلنگ جاری ہے ۔نام نہاد جمہوری نظام کی باگ ڈور ان عناصر کے ہاتھ میں ہے جو انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں ،بے گناہوں کو قتل کرنے اور ماورائے عدالت ہلاکتوں میں براہ راست ملوث ہیں ۔ مجلس وحدت المسلمین کے رہنماء راجہ نا صر عباس اور انکی دیگر لیڈر شپ اور کارکنوں کے آئینی،قانونی اور جائز احتجاج کو 53روز گزر گئے مگر کوئی حکومتی کارندہ ٹس سے مس نہیں ہوا جو بے حسی کی انتہا ہے ۔وہ گزشتہ روز پاکستان عوامی تحریک کے سندھ ،بلوچستان اور جنوبی پنجاب سے آئے ہوئے رہنماؤں اور مختلف وفود سے بات چیت کر رہے تھے ۔انہوں نے کہاکہ مہذب جمہوری ممالک اور عوام کی حقیقی نمائندگی رکھنے والی حکومتیں پر امن احتجا ج کو سنجیدگی سے لیتی ہیں ،مگر پاکستان کے کرپٹ حکمرانوں کے نزدیک مظالم کے شکار عوام کے احتجاج کی کوئی وقعت نہیں ،لوگ جب تک اپنے مقتولوں کی لاشیں اٹھا کر وزیر اعلیٰ ہاؤس،گورنر ہاؤس، وزیر اعظم ہاؤس یا پارلیمنٹ کے باہر دھرنے نہ دیں تو ایف آئی آر تک درج نہیں ہوتی، اس ظلم کے نظام نے کمزور کو انصاف سے محروم کر رکھا ہے ۔ طاہر القادری نے کہاکہ اس بات پر کوئی دوسری رائے نہیں ہے کہ دہشتگردوں کے ہمدرد موجود حکمرانوں نے قومی ایکشن پلان کی روح کو ختم کر دیا ہے اور سیاسی مخالفین کو مارا جا رہا ہے ،مخالفین کی زمینوں پر قبضیہ کروانا اور سیاسی مخالفین کو قتل کرنا موجودہ حکمرانوں کے روز مرہ کے سیاسی معمولات کا حصہ ہے،یہی باتیں مجلس وحدت المسلمین کی قیادت کر رہی ہے اور انکا موقف100 فی صد درست ہے اور ہم اسکی مکمل تائید و حمایت کرتے ہیں،انہوں نے کہاکہ حکمران جواب دیں کہ 2010 سے 2016 کے درمیان شیعہ کمیونٹی کے 34سو سے زائد افراد کی ٹارگٹ کلنگ کیوں ہوئی ؟ اور اس قتل و غارت گری کے منصوبہ ساز اور ذمہ دار گرفت میں کیوں نہیں آئے،انہوں نے کہاکہ مجلس وحدت المسلمین کے رہنماؤں کے پارہ چنار میں شیعہ کمیونٹی کے افراد کی جائیدادوں پر قبضے کی جو بات کی ہے اس کا سنجیدگی سے نوٹس لیا جائے ۔

طاہر القادری

مزید : صفحہ آخر