”برطانیہ بنانا ریپبلک نہیں جو گرفتار کرلے“ اسحاق ڈار ایک مرتبہ پھر بول پڑے

”برطانیہ بنانا ریپبلک نہیں جو گرفتار کرلے“ اسحاق ڈار ایک مرتبہ پھر بول پڑے
”برطانیہ بنانا ریپبلک نہیں جو گرفتار کرلے“ اسحاق ڈار ایک مرتبہ پھر بول پڑے

  


لندن(آئی این پی) مسلم لیک (ن) کے رہنما و سابق وزیرخزانہ اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ انہیں پاکستانی اداروں سے انصاف ملنے کی توقع نہیں ہے،وہ اپنا علاج مکمل ہونے تک پاکستان واپس نہیں آئیں گے،برطانیہ میں عدالتی نظام پر انتظامیہ دباو¿ نہیں ڈال سکتی، برطانیہ کوئی بنانا ریپبلک نہیں ہے، یہاں عدالتی نظام بہت مضبوط ہے لہذا پاکستان کی مجھے گرفتار کرنے کے حوالے سے خواہش کبھی پوری نہیں ہوگی۔سابق وزیر خزانہ نے پیر کو ایک عرب اخبار سے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ انہیں اپنے خلاف آمدن سے بڑھ کر اثاثہ جات کیس میں اداروں سے انصاف ملنے کی توقع نہیں ہے،ان کے خلاف آمدن سے بڑھ کر اثاثے بنائے جانے کا مقدمہ بدنیتی پر مبنی ہے۔ گزشتہ 35سال سے فیڈرل بورڈ آف ریونیو کو باقاعدگی سے انکم ٹیکس ریٹرن جمع کرائے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ میری حوالگی کے حوالے سے پاکستان ا ور بر طانیہ کے مابین ایک ایم او یو پر دستخط ہوئے ہیں یہ کوئی حتمی معاہدہ نہیں ہے، پاکستان کو پہلے یہ ثابت کرنا ہوگا کہ میرے خلاف مقدمات سیاسی نہیں۔مجھے امید ہے کہ حکومت برطانیہ میرے خلاف عدالتی کارروائی کا آغاز نہیں کرے گی کیونکہ یہاں انتظامیہ جانتی ہے کہ میرے خلاف مقدمات سیاسی بنیادوں پر بنائی گئے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ میرا برطانوی ویزہ 2020تک کار آمدہے۔

مزید : برطانیہ