پولیس حراست میں ہلاکت کسی صورت قابل قبول نہیں،آئی جی

پولیس حراست میں ہلاکت کسی صورت قابل قبول نہیں،آئی جی

  

لا ہو ر (کر ائم رپو رٹر) آ ئی جی پنجاب شعیب دستگیر نے کہاہے کہ پولیس حراست میں تشدد اورہلاکت کسی صورت قابل قبول نہیں جبکہ کسی شہری کو غیر قانونی طور پر حراست میں رکھنے والوں کے خلاف بھی زیرو ٹالرینس کے تحت فوری کاروائی کو یقینی بنایا جائے اور گرمی و حبس کے موسم میں صوبے کے تمام اضلاع کے تھانوں کے حوالات میں حفظان صحت کے مطابق ہوادار اور بہتر ماحول کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے۔ انہوں نے مزیدکہاکہ بچوں اور خواتین کے ساتھ پیش آنے والے جرائم بالخصوص زیادتی کے واقعات کا خاتمہ میری اولین ترجیحات میں شامل ہے لہذاجن کیسز کی تفتیش میں تفتیشی افسران کی غفلت کی وجہ سے ڈی این اے سیمپل یا ایم ایل سی جمع کروانے میں تاخیر نظر آئے ایسے تفتیشی افسران کے خلاف کاروائی میں لمحہ بھر تاخیر نہ کی جائے جبکہ ایسے جرائم میں ملوث ملزمان کو سخت سے سخت سزا دلوانے کیلئے فارنزک سائنس اورجیو فینسنگ سے بھرپورہ استفادہ کیا جائے۔ آئی جی پنجاب نے مزیدکہاکہ ڈکیتی، قتل اور اغواء برائے تاوان سمیت دیگر سنگین جرائم کے خاتمے کیلئے ترجیحی بنیادوں پر اقدامات کو یقینی بنایاجائے تاکہ ان جرائم میں ملوث ملزمان کا محاسبہ کرکے عوام کی جان ومال اور عزت کے تحفظ کا عمل مزید بہتر ہوسکے۔ آئی جی پنجاب نے جرائم کنٹرول کرنے میں صوبہ بھر میں بہترین کارکردگی دکھانے پر ڈی پی او جھنگ سردار غیاث گل کیلئے تعریفی سرٹیفیکیٹ اور نقد انعام دینے کا اعلان کیا۔

جبکہ فیصل ا?باد کے 4تھانوں کو ا?ئی ایس او ISO)? سرٹیفیکیشن پر سی پی او فیصل ا?باد کیپٹن?ر? محمد سہیل چوہدری کو تعریفی سرٹیفیکیٹ دینے کا کہا۔انہوں نے تاکید کی کہ صوبہ بھر میں اشتہاری ملزمان، عدالتی مفروروں اور سماج دشمن عناصر کے خلاف کاروائیوں میں مزید تیزی لائی جائے اور بڑے بدمعاشوں اور منشیات فروشوں کی گرفتاری کیلئے ڈی پی اوز کریک ڈاؤن کی خود نگرانی کریں۔ ا?ئی جی پنجاب نے اشتہاریوں کی گرفتاری میں اچھی کارکردگی دکھانے پر ڈی پی او اوکاڑہ عمر سعید ملک اورڈی پی او قصورزاہد نواز مروت کو شاباش دیتے ہوئے تمام ڈی پی اوز کو اشتہاری ملزمان کی گرفتاری کیلئے خصوصی ا?پریشنز کرنے کی ہدایت کی۔انہوں نے مزیدکہاکہ دھاتی دورو پتنگوں کی تیاری، خریدو فروخت اور استعمال میں ملوث ملزمان کسی رعائیت کے مستحق نہیں لہذا تمام سرکل افسران اپنے زیر انتظام علاقوں میں پتنگ اڑانے والے قانون شکنوں کے خلاف کاروائیوں میں مزیدتیزی لائیں اورموثر حکمت عملی کے تحت اس خطرناک کھیل میں ملوث قانون شکن عناصر کو جلد از جلد پابند سلاسل کروائیں تاکہ شہریوں کی قیمتی جانوں کو ہر ممکن تحفظ فراہم کیاجاسکے۔ انہوں نے مزیدکہا کہ منشیات فروشی کے مکروہ دھندے میں ملوث مجرمان معاشرے کا ناسور ہیں جنہیں جڑ سے اکھاڑکر کیفر کردار تک پہنچانے کیلئے انفارمیشن بیسڈ انٹیلی جنس ا?پریشنز کو جاری رکھا جائے اور بڑے مگرمچھوں کے ساتھ ساتھ چھوٹے ڈیلرز کے صفایا کو بھی یقینی بنایاجائے اور اس حوالے سے کام کرنے والے دیگر اداروں اور ایجنسیز کے ساتھ قریبی رابطہ رکھا جائے۔ریسپانس ٹائم میں بہتری پر لاہور پولیس کی کارکردگی کو سراہتے ہوئے ا?ئی جی پنجاب نے جرائم پیشہ افراد کے گردگھیرے کو مزید تنگ سے تنگ کرنے کی ہدایت کی۔ اضلاع کی باقاعدہ انسپکشن کرنے پرا?ر پی او ملتان وسیم سیال کو شاباش دیتے ہوئے انہوں نے کہاکہ دیگرا?رپی اوز بھی اپنے زیر انتظام اضلاع کی انسپکشن کو معمول بنائیں۔انہوں نے مزیدکہاکہ اندھے قتل ٹریس کرنے والے تفتیشی افسران کی مناسب حوصلہ افزائی کی جائے اورتفتیش کے معیار کو بہتر سے بہتر بنانے کیلئے قابل اور محنتی تفتیشی افسران کی بڑے تھانوں میں تعیناتی کے علاوہ اہم کیسز کی تفتیش بھی انہیں سونپی جائے۔ انہوں نے تاکید کی کہ لاؤڈ اسپیکر ایکٹ، وال چاکنگ اور نفرت انگیز موادکی نشر و اشاعت کے خلاف کاروائی میں قطعی رعائیت نہ برتی جائے اور نیشنل ایکشن پلان کے تحت انسدادی کاروائیوں کا سلسلہ جاری رکھا جائے۔ انہوں نے مزیدکہاکہ مذہبی مقامات بالخصوص مساجد، امام بارگاہوں،اولیاء کے مزارات اور اقلیتی عبادت گاہوں کی سیکیورٹی پر خاص توجہ دی جائے اور تمام دستیاب وسائل کو بروئے کار لاکر جاری کردہ ایس او پیز کے مطابق سیکیورٹی انتظامات کو یقینی بنایاجائے جبکہ سیکیورٹی پر مامور اہلکاروں کو موجودہ حالات میں ڈیوٹی کی حساسیت کے متعلق موثر بریفنگ دی جائے تاکہ وہ اپنے فرائض مزید تندہی اورہائی الرٹ ہو کر سر انجام دیں۔انہوں نے مزیدکہاکہ کورونا کے پھیلاؤ کو مزید محدودرکھنے کیلئے حکومتی ہدایات اور ایس او پیز کی پاسداری پر خاص توجہ دی جائے اور جن علاقوں کو سمارٹ لاک ڈاؤن کے تحت حکومت نے تاحال سیل کیا ہوا ہے وہاں پولیس ٹیمیں بھرپور جوش و جذبے اور محنت کے ساتھ اپنے فرائض ادا کرتی رہیں۔ انہوں نے مزیدکہاکہ صوبے کے تمام اضلاع میں حساس دفاتر، تنصیبات اور اہم مقامات کے سیکیورٹی پلان کا از سر نو جائزہ لیتے ہوئے موثر مانیٹرنگ اور حکمت عملی کے تحت انتظامات کو مزید بہترسے بہتر بنایا جائے اورتمام ا?ر پی اوز، ڈی پی اوز خود فیلڈ میں نکل کر سیکیورٹی انتظامات کی انسپکشن کرتے رہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے ا?ج سنٹرل پولیس ا?فس میں منعقدہ ویڈیولنک کانفرنس کے دوران صوبے کے تمام ا?رپی اوز، سی پی اوز اور ڈی پی اوز کو ہدایات دیتے ہوئے کیا۔ کانفرنس میں کورونا لاک ڈاؤن،سنگین جرائم کا گراف اور سیکیورٹی صورتحال سمیت دیگر پیشہ ورانہ امور زیر بحث ا?ئے۔ کانفرنس میں تمام ا?ر پی اوز اور ڈی پی اوز نے اپنے ریجنز اور اضلاع میں سنگین کرائم کے گراف اور پولیس ٹیموں کی کارکردگی کے حوالے سے ا?ئی جی پنجاب کو ا?گا ہ کیا جس پر ا?ئی جی پنجاب نے انتظامی امور میں بہتری اور کارکردگی کو مزید موثر بنانے کے احکامات جاری کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ اسلحہ کی نمائش اور ہوائی فائرنگ کرکے ویڈیوز سوشل میڈیا پر اپ لوڈ کرنے والے ملزمان بھی کسی رعائیت کے مستحق نہیں، ایسے من چلوں کی گرفتاری کیلئے اقدامات میں تیزی لائی جائے اور ان کے پاس موجود اسلحہ کی لائسنس کی منسوخی کیلئے دیگر اداروں کے ساتھ کوارڈی نیشن کا عمل بہتر سے بہتر بنایا جائے۔ انہوں نے مزید کہا کہ جرائم پیشہ اور سماج دشمن عناصر کی گرفتاری کیلئے بین الصوبائی اور بین الاضلاعی چیک پوسٹوں پر چیکنگ اور نگرانی کا عمل مزید سخت کیا جائے اور سیکیورٹی انتظامات کے حوالے سے اگر کسی ضلع کو وسائل کے حوالے سے کوئی مدد درکار ہے تو فوری طور پر سنٹرل پولیس ا?فس کی ا?پریشنز برانچ کو مطلع کیا جائے تاکہ انکی فی الفورفراہمی میں کوئی رکاوٹ باقی نہ رہے۔ایڈیشنل ا?ئی جی ا?ئی اے بی اظہر حمید کھوکھر، ایڈیشنل ا?ئی جی ا?پریشنز انعام غنی، ایڈیشنل ا?ئی جی انویسٹی گیشن فیاض احمد دیو، ایڈیشنل ا?ئی جی اسٹیبلشمنٹ بی اے ناصر،ڈی ا?ئی جی ہیڈ کوارٹر سید خرم علی، ڈی ا?ئی جی لیگل جواد ڈوگر، ڈی ا?ئی جی ا?پریشنز سہیل اختر سکھیرا، ڈی ا?ئی جی ا?ئی ٹی وقاص نذیر اور اے ا?ئی جی ا?پریشنز عمران کشور سمیت دیگر افسران بھی میٹنگ میں موجود تھے۔

مزید :

علاقائی -