اساتذہ کو اعتماد میں لئے بغیر کوئی فی صلہ قبول نہیں: فپواسا

اساتذہ کو اعتماد میں لئے بغیر کوئی فی صلہ قبول نہیں: فپواسا

  

پشاور (سٹی رپورٹر)فیڈریشن آف ال پاکستان یونیورسٹیز اکیڈیمک سٹاف ایسو سی ایشن (فپواسا) خبر پختونخوا چیپٹرنے جامعات کے قوانین میں مجوزہ ترامیم کی مزمت کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ اساتزہ کو اعتماد میں لئے بغیر کوئی فیصلہ قبول نہیں ہوگا اور دھمکی دی ہے کہ اگر حکوممت کی جانب سے اساتذہ کو اعتماد میں لئے بغیر جامعات کے قوانین میں تبدیلی کی گئی تو اسکے رد عمل کی ذمہ دار ی حکومت پر عائد ہوگی فپواسا خیبر پختونخوا چیپٹر کے صدر ڈاکٹر سرتاج عالم کاکا خیل کے مطابق کہ جامعات میں مجوزہ ترامیم ایک ظالمانہ اقدام ہے جسکی بھرپور مذمت کرتے ہے اور موجودہ حکومت نے پہلے پنجاب میں ایک ارڈنینس کے ذریعہ جامعات کے ایکٹ میں تبدیلی لانے کی کوشش کی تاہم وہاں کی جامعات کی طرف سے انتہائی سخت رد عمل سامنے اانے کے بعد حکومت کو پیچھے ہٹنا پڑا اور آرڈنینس کو واپس لیا گیا۔انہوں نے کہا کہ کہ اگر خیبر پختونخوا حکومت بھی پنجاب حکومت کی طرح کس قسم کے یونیورسٹیز ایکٹ میں ارڈنینس کے ذریعے تبدیلی لانے کی کوشش کرے گی تو صوبہ بھر کے جامعات کے ہزاروں پرفیسرز اور انتظامی عملہ کی طرف سے رد عمل سامنے ائے گا انہوں نے واضح کیا کہ حکومت کے کسی قسم کے ظالمانہ اقدام کی حمایت نہیں کرے گے اور جامعا ت کی خود مختاری پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا۔فپواسا نے حکومت کی جانب سے جامعات پر جاری پابندی کے بارے میں بتایا کہ جس طرح حکومت نے بڑے اھسن انداز میں جامعات پر موجودہ پابندی ختم کرنے عندیہ دیا ہے اسی طرح امید رکھتی ہے کہ حکومت جامعات کے قوانین کے بارے میں بھی تمام سٹیک ہولڈرز کو اعتماد میں لے گی۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -