سولجر بازار فاطمہ ہائیٹس میں غیر قانونی تعمیرات سے مکین مشکلات کا شکار

سولجر بازار فاطمہ ہائیٹس میں غیر قانونی تعمیرات سے مکین مشکلات کا شکار

  

کراچی (رپورٹ /ندیم آرائیں)کراچی میں غیر قانونی تعمیرات کے تواتر کے ساتھ منہدم ہونے کے واقعات رونما ہونے کے باوجود بلڈر مافیا نے مزار قائد اعظم کے نزد سولجر بازار کے علاقے میں فاطمہ ہائیٹس نامی عمارت کی چھت پر فلیٹس تعمیر کرکے کروڑوں روپے میں فروخت کے لیے پیش کردیئے۔عمارت میں رہائش پذیر مکینوں نے اس غیر قانونی عمل کے خلاف چیف سیکرٹری سندھ اور ڈائریکٹر ایس بی سی اے کوتحریر شکایات ارسال کردیں تاہم اب تک غیر قانونی تعمیرات کے خلاف کوئی کارروائی عمل میں نہیں آسکی ہے۔فلیٹس کے مکینوں نے الزام عائد کیا ہے کہ غیر قانونی تعمیرات میں ملوث بلڈر مافیا کی جانب سے انہیں سنگین نتائج کی دھمکیاں دی جارہی ہیں۔تفصیلات کے مطابق کراچی کے علاقے سولجر بازار میں نشتر پارک کے بالمقابل پلاٹ نمبر JM1-167میں بلڈر کی جانب سے فاطمہ ہائیٹس کے نام سے چار منزلہ عمارت میں فلیٹس تعمیر کیے گئے ہیں،جن کو فروخت کردیا گیا۔ایس بی سی اے کی جانب سے اس پلاٹ پر گراؤنڈ پلس فور تعمیرات کی اجازت دی گئی تھی تاہم عمارت میں موجود فلیٹس آباد ہونے کے بعد بلڈر نے عمارت کی چھت پر مزید غیر قانونی تعمیراتی کام شروع کرادیااور وہاں چار فلیٹس تعمیر کرانے شروع کردیئے جن کی تکمیل آخری مراحل میں ہے۔بلڈر کے اس عمل کے خلاف فاطمہ ہائیٹس میں رہائش پذیر افراد سخت تشویش کا شکار ہوگئے ہیں اور انہوں نے اس خدشہ کا اظہار کیا ہے کہ غیرقانونی تعمیرات سے ان کی اور ان کے اہل خانہ کی زندگیاں داؤ پر لگ گئی ہیں کیونکہ شہر میں تواتر کے ساتھ اس طرح واقعات پیش آرہے ہیں جس میں ایس بی سی اے کی ملی بھگت سے تعمیر کی گئی کثیر المنزلہ عمارتیں ناقص میٹریل کی وجہ سے زمین بوس ہورہی ہیں۔فلیٹ مالکان نے اپنے خدشات سے بلڈر کو آگاہ تو اس نے انہیں سنگین نتائج کی دھمکیاں دینا شروع کردیں،جس کے بعد عمارت میں رہائش پذیر افراد نے چیف سیکرٹری سندھ اور ڈی جی ایس بی سی اے کے نام درخواستیں ارسال کیں،جس میں اس غیر قانونی عمل کی نشاندہی کی گئی تھی تاہم اس پر تاحال کوئی کارروائی عمل میں نہیں آسکی ہے۔اس ضمن میں فلیٹ مالکان کا کہنا ہے کہ ہم نے اپنی زندگی بھر کی جمع پونجی ان فلیٹس کی خریداری میں لگادی ہے۔ہم سے وعدہ کیا گیا تھا کہ اس عمارت میں ہمیں تمام رہائشی سہولتیں فراہم کی جائیں گی لیکن اس کے برعکس چھت کے اوپر غیر قانونی تعمیرات کرکے ہمیں عدم تحفظ کا شکار کردیاگیا ہے اور ہم انتہائی خوفزدہ حالت میں زندگی گزارنے پر مجبور ہیں۔انہوں وزیر بلدیات سندھ،چیف سیکرٹری سندھ اور ڈی جی ایس بی سی اے سے اپیل کی کہ بلڈر مافیا کی جانب سے فاطمہ ہائیٹس میں کی جانے والی غیر قانونی تعمیرات کا نوٹس لیا جائے اور انہیں فوری طور پر منہدم کیا جائے۔

مزید :

صفحہ اول -