سانحہ ماڈل ٹاؤن، 4ملزمان کی بریت درخواستوں پر سماعت8 جولائی تک ملتوی

سانحہ ماڈل ٹاؤن، 4ملزمان کی بریت درخواستوں پر سماعت8 جولائی تک ملتوی

  

لاہور(نامہ نگار)انسداد دہشت گردی عدالت کے جج اعجاز احمد بٹر نے سانحہ ماڈل ٹاؤن کیس میں 3 پولیس افسران سمیت 4 ملزمان کی بریت کی درخواستوں پر سماعت دلائل سننے کے بعد 8 جولائی تک ملتوی کر دی، پاکستان عوامی تحریک کے جواد حامد نے گزشتہ روز پھر التواء مانگ لیا  جس پر ملزمان کے وکیل برہان معظم ملک نے اعتراض کرتے ہوئے موقف اختیار کیا کہ عوامی تحریک کی طرف سے بار بار تاریخیں مانگنا اور فیصلے میں رکاؤٹ پیدا کرنا ان کی بدنیتی ظاہر کرتا ہے، عوامی تحریک کے وکیل نے کہا کیس کی کسی دوسرے جج پاس منتقلی کیلئے ہائیکورٹ میں درخواست زیر التواء ہے، کیس منتقلی کی درخواست پر فیصلے تک انسداد دہشتگردی عدالت بریت کی درخواستوں پر فیصلہ نہ کرے، وکیل ملزمان برہان معظم ملک نے موقف اختیار کیا کہ عوامی تحریک سازش کے تحت سانحہ ماڈل ٹاؤن کیس کا فیصلہ نہیں ہونے دے رہی ہے جب بھی کیس کے فیصلے کی تاریخ آتی ہے تو عوامی تحریک بے بنیاد درخواستیں دائر کرنا شروع کر دیتی ہے ٹرائل کورٹ بے بنیاد درخواستوں کو رد کر ملزمان کی بریت کی درخواستوں پر فیصلہ کرے، سابق آئی جی مشتاق سکھیرا، ڈی آئی جی آپریشنز رانا عبدالجبار اور ایس ایس پی طارق عزیز اورسابق ٹی ایم او علی عباس نے بریت کی درخواستیں دائر رکھی ہیں۔

مزید :

علاقائی -