اتحادی حکومت کے پاس دو راستے تھے، عبوری حکومت یا مشکل فیصلے، گیلانی 

 اتحادی حکومت کے پاس دو راستے تھے، عبوری حکومت یا مشکل فیصلے، گیلانی 

  

 ملتان (این این آئی)سابق وزیراعظم و پاکستان پیپلز پارٹی کے پارلیمانی لیڈر سید یوسف رضا گیلانی نے کہا ہے کہ اتحادی حکومت کے پاس دو راستے تھے، عبوری حکومت یا مشکل فیصلے، ہم نے ملک کا سوچا،عالمی مہنگائی کی وجہ سے ہم حکومت کے ساتھ پاور شیئرنگ کی بجائے مسائل کا بوجھ بھی اٹھا رہے ہیں،عمران خان نے عالمی سطح پر ملک کو تنہا کیا جس کا خمیازہ پوری قوم کو بھگتنا پڑ رہا ہے،عمران خان کے معاہدوں کو پورا نہ کرتے تو دنیا کا کوئی ملک بھی ہماری مدد نہ کرتا،اتحادی حکومت ملک میں سیاسی استحکام چاہتی ہے کیونکہ اس کے بغیر معاشی استحکام نہیں آ سکتا،سندھ کے بلدیاتی انتخابات میں پیپلز پارٹی کو کامیابی پر مبارکباد پیش کرتا ہوں،پنجاب سمیت دیگر صوبوں میں بھی بلدیاتی الیکشن ہونے چاہئیں، جنوبی پنجاب صوبے کے لئے سینیٹ میں منظور شدہ بل موجود ہے لیکن ہمارے پاس دوتہائی اکثریت نہیں اکثریت میں آئیں گے تو صوبہ بنائیں گے،پی پی 217سے ہمارا میدوار بھاری اکثریت سے کامیاب ہوگا،آئندہ عام انتخابات کی تیاریوں کے لئے پارٹی کی بھی تنظیم نو کر رہے ہیں،سابق وزیر خارجہ نے 2018کے الیکشن میں دھاندلی تسلیم کرکے ہمارے موقف کی تائید کی ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے اپنی رہائش گاہ پر میڈیا سے بات چیت کے دوران کیا اس موقع پر خواجہ رضوان عالم، خالد حنیف لودھی، ملک نسیم لابر، ایم سلیم راجہ، اے ڈی بلوچ، ارشد اقبال بھٹہ، سحرش خان، شگفتہ بلوچ، عابدہ بخاری، عاشق بھٹہ، چوہدری یاسین، ضیاء انصاری بھی موجود تھے سید یوسف رضا گیلانی نے کہا کہ پاکستان پیپلز پارٹی نے آئین بنایا اور ہمیں آئین کی پاسداری کی ہم آئندہ الیکشن کے لئے پارٹی کی تنظیم نو کا کام کر رہے ہیں۔

 گیلانی 

مزید :

صفحہ آخر -