سائنس کا نیا کارنامہ، مصنوعی شریانیں تیار کر لیں

سائنس کا نیا کارنامہ، مصنوعی شریانیں تیار کر لیں
سائنس کا نیا کارنامہ، مصنوعی شریانیں تیار کر لیں

  

بوسٹن (مانیٹرنگ ڈیسک) تھری ڈی پرنٹنگ کی نئی ٹیکنالوجی نے دنیا میں دھوم مچا رکھی ہے اور اب اس ٹیکنالوجی کے ذریعے خون کی شریانیں تیار کرنے کا عمل بھی شروع ہو گیا ہے۔ لیب آن آ چپ (Lab on a Chip) نامی جریدے میں شائع ہونے والی تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ امریکہ کے برائگم اینڈ ویمنز ہسپتال کے سائنسدانوں نے ایک تھری ڈی پرنٹر کے ذریعے خون کی شریانیوں کو پرنٹ کرنے کے تجربات کئے ہیں۔ تحقیق میں شامل سینئر سائنسدان علی خادم حسینی نے بتایا کہ خون کی نالیوں کو مصنوعی طریقے سے بنانا بہت مشکل کام ہے لیکن ان تجربات میں ہائیڈروجیل نامی مارے اور تھری ڈی پرنٹنگ ٹیکنالوجی کو ملا کر اس مشکل کام کو ممکن بنا دیا گیا ہے۔ تحقیقی ٹیم نے پہلے شریانوں کیلئے ایک 3D سانچہ پرنٹ کیا اور پھر اس کے اوپر ہائیڈروجیل کو منتقل کر کے اندرونی سانچے کو باہر نکال دیا جس سے سوراخ دار شریانیں تیار ہو گئیں۔ یاد رہے کہ خون کی شریانیں حد سے زیادہ باریک ہوتی ہیں اور مصنوعی طریقے سے ان کو تیار کرنا ایک اہم سائنسی کارنامہ ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس