یوکرین کا 38 کوئلے کی کانیں بیچنے کا فیصلہ

یوکرین کا 38 کوئلے کی کانیں بیچنے کا فیصلہ
یوکرین کا 38 کوئلے کی کانیں بیچنے کا فیصلہ

  

ماسکو (مانیٹرنگ ڈیسک) خانہ جنگی اور معاشی بدحالی سے پریشان یوکرین نے اپنی 38 کوئلے کی کانیں بیچنے کافیصلہ کر لیا ہے۔ یوکرینی حکومت نے آئی ایم ایف کے مطالبے کے مطابق 29 مئی کو متعلقہ اداروں کو ن کانوں کی بولی لگانے کی ہدایات جاری کر دی ہیں۔ حکومت کا کہنا ہے کہ یہ کانیں سراسر گھاٹے کا سودا ثابت ہو رہی ہیں کیونکہ ان سے منافع بھی نہیں ہو رہا اور انہیں بھاری حکومتی سبسڈی بھی دینی پڑ رہی ہے۔ ابھی پچھلے سال ہی ان کانوں کے کاروبار کو سہارا دینے کیلئے 1.8 ارب ڈالر فراہم کئے گئے تھے اور سابقہ صدر یانوکووچ نے اس منصوبے میں خصوصی دلچسپی لی تھی لیکن موجودہ حکومت نے بدامنی، خانہ جنگی اور مالی مسائل سے پریشان ہو کر ان کانوں سے چھٹکارا حاصل کرنے  کا فیصلہ کر لیا ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ ان کی قیمت 8 سینٹ (قریبا 8 پاکستانی روپے ) فی کان تک متوقع ہے کیونکہ خریدار کو کثیر سرمایا کاری کر کے انھیں منافع بخش بنانا ہوگا اور فی الحال حکومت صرف ان سے جان چھڑانا چاہتی ہے.

مزید : بین الاقوامی