پنجاب میں بھی ہوتی ہے۔۔۔ آن لائن ایف آئی آر

پنجاب میں بھی ہوتی ہے۔۔۔ آن لائن ایف آئی آر
 پنجاب میں بھی ہوتی ہے۔۔۔ آن لائن ایف آئی آر

  



چند روز قبل میں اپنے ایک ساتھی کے ہمراہ دفتر میں بیٹھا کام کررہا تھا کہ اچانک میرے ساتھی کے فون پر ایک نامعلوم کال آئی جس کے بعد کچھ ایسی صورتِ حال پیداہوگئی کہ اُس معاملے پر قانونی کارروائی ضروری تھی تو میرے ساتھی نے بذریعہ کمپیوٹر پنجاب پولیس کی ویب سائٹpunjabpolice.gov.pk www. پرنام ، شاختی کارڈ نمبر، فون نمبر اور واقعہ E-Complaints پر درج کیا جس کے بعد ایک Complaint نمبر جاری ہوا ۔اِس کے بعدہم دونوں یہی سمجھ رہے تھے کہ اِس معاملے میں سیشن عدالت سے رجوع کرنا پڑے گا،مگر پندرہ سے بیس دن انتظار کے بعد متعلقہ پولیس نے میرے ساتھی سے رابطہ کیا اور اُن کو ایس ایچ او کی موجودگی میں تھانہ آنے کی دعوت دی جس کے بعد اگلے روز میں اپنے ساتھی کے ہمراہ وہاں گیا جہاں موجود ڈیوٹی افسر نے میرے ساتھی کو اُن کی آن لائن شکایت دکھائی اور اُس میں سے چندانگریزی الفاظ کے مطلب بھی معلوم کیے، جس کے بعد میرے ساتھی کو کہا گیا کہ آپ واقعہ کے حوالے سے اُردو میں ایک درخواست بنام ایس ایچ او برائے اندراج مقدمہ تحریرکریں جس کے بعد آپ کو ایس ایچ او کے سامنے پیش کیا جائے گا پھرآپ کی درخواست پرکارروائی ہو گی۔

میرے ساتھی نے ڈیوٹی افسر کی ہدایت پر درخواست تحریر کرنا شروع کردی تو میں نے اُن صفحات کو ملاحظہ کرنا شروع کردیا جن پر آئن لائن شکایت درج تھی تو مجھے پتہ چلا E-Complaintsپر ابتدائی کارروائی پولیس کے افسرانِ بالا کرتے ہیں، جس کے بعد اِس شکایت کو متعلقہ پولیس کے پاس بھجوادیا جاتا ہے۔ اِس E-Complaints کی خاص بات مجھے یہ نظر آئی کہ اِس پر دو سے تین افسران نے اپنی رائے بھی دی ہوئی تھی۔درخواست تحریر کرنے کے بعد میرے ساتھی کو ایس ایچ او کے روبرو پیش کیاگیا جس پر میرے ساتھی کو کہا گیا کہ ایک دوروز میں آپ سے دوبارہ رابطہ کیا جائے گا۔اِس کے بعد اگلے ہی روز میرے ساتھی کو محکمہ پولیس کی طرف سے SMSموصول ہوا جس میں تحریر تھا کہ آپ کی درخواست پر FIRدرج ہوگئی ہے ۔میرا اپنے ساتھی کے ساتھ رہنا کسی نئے تجربے سے کم نہ تھا اور اِس طرح میری معلومات میں کچھ نئی باتوں کا اضافہ ہوا ۔ویسے عام طور پرقومی اخبارات ملاحظہ کرنے پر صرف ایسا ہی معلوم ہوتا ہے کہ آن لائن FIRصرف صوبہ خیبر پختونخوا ہی میں درج ہو رہی ہے، مگر اب ایسا نہیں ہے میں اب اِس بارے میں مکمل معلومات رکھتا ہوں کہ آئن لائن FIRپنجاب میں بھی درج کی جارہی ہے۔

دراصل چند برسوں سےFIRدرج کروانا بھی ایک نہایت ہی مشکل کام سمجھاجاتا رہاہے، مگر وقت کے ساتھ ساتھ پنجاب پولیس میں بھی چند تبدیلیاں نظر آئی ہیں، لیکن صرف FIRکادرج ہونا ہی مسئلے کا حل نہیں، بلکہ اِس کے بعد تفتیشی عمل کو پاک صاف کرنا بھی بہت ضروری ہے جہاں رشوت اب بھی عام ہے، جس بنیاد پر ناقص تفتیش کرکے گناہگار ملزمان کو بے گناہ قراردے دیا جاتا ہے، جبکہ موجودہ حکومت نے پنجاب پولیس کے ملازمین کی تنخواہوں میں کئی بار اضافہ کیا ہے، جس سے اب اِن کی تنخواہیں کئی محکموں کے ملازمین سے زیادہ ہو گئی ہیں ۔ ضرورت اِس امر کی ہے کہ پنجاب پولیس کے ڈھانچے میں ہنگامی تبدیلیاں لاتے ہوئے تفتیشی عمل کو اِس معیار کا بنایا جائے کہ اِس سے جرائم پیشہ اور کرپٹ عناصربچ نہ سکیں جس طرح کی ہنگامی تبدیلیاں دہشت گردی کے خاتمے کے لئے کی گئی ہیں، مگر باتی نظام ویسے کا ویسا ہی ہے جس میں اصلاحات وقت کی اہم ضرورت ہے تاکہ عدالتوں کوبھی قانون کے تقاضے پورے کرنے میں مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے اِس طرح ہر کوئی جرم کرنے سے باز رہے گا اور قانون کا بول بالا ہوگا۔حکومتِ وقت کی طرف سے پنجاب میں آن لائن FIR شروع کرناایک احسن اقدام ہے، مگراِس بارے میں اب تک عوامی آگاہی کی کو ئی مہم نہیں چلائی گئی، جس کی وجہ سے لوگ اب بھی تھانہ کچہری کا رُخ کرنے سے ڈرتے ہیں اِس سلسلہ میں عوامی آگاہی مہم وقت کی اہم ضرورت ہے جو سیاسی نہیں عوامی مفاد کے پیشِ نظر فوراًچلائی جانی چاہئے تاکہ عوام اِس سہولت سے مستفید ہوسکیں۔

مزید : کالم