وہاڑی: پہلے فضائی حادثے کی یاد گار، قبریں لاوارث، مختص اراضی پرقبضہ

  وہاڑی: پہلے فضائی حادثے کی یاد گار، قبریں لاوارث، مختص اراضی پرقبضہ

  

وہاڑی(بیورورپورٹ،نامہ نگار)پاکستان کی تاریخ کاپہلافضائی حادثہ 26 نومبر 1948کووہاڑی کے علاقہ بنگلہ فاضل کے موضع فیض واہ کے قریب پیش آیاحادثہ کی جگہ پرحادثہ میں جان بحق ہونے والے مسافروں اورعملہ کی میتیں کو دفن کیاگیااورایک یادگار(بقیہ نمبر26صفحہ6پر)

بھی تعمیرکی گئی تھی وقت گذرنے کے ساتھ ہی قبریں اوریادگارٹوٹ پھوٹ کاشکارہیں۔تفصیل کے مطابق پاکستان کی تاریخ کاپہلافضائی حادثہ26نومبر1948کووہاڑی کے علاقہ بنگلہ فاضل کے موضع فیض واہ کے قریب پیش آیاجہاں پاکستان ائرویزکاائرکرفٹ ڈگلس ڈی سی3فنی خرابی کی وجہ سے گرکرتباہ ہوگیاتھاجہازمیں سوارعملہ سمیت 21افرادجان کی بازی ہارگئے تھے حکومت پاکستان نے جائے حادثہ پرہی جاں بحق ہونے والوں کی تدفین کی اوراس مقام پرایک ایکڑزمین مختص کرکے ایک یادگارتعمیرکردی تھی ابتداء کے چندسال حکومت اس یادگارکی نگرانی کرتی رہی اوراس کی تعمیرومرمت کی طرف توجہ دی جاتی رہی اورحادثہ شکارہونے والے مسافروں کے لواحقین بھی ہرسال محرم کے موقع پراپنے پیاروں کی قبروں پرحاضری دیتے پھولوں کی چادریں چڑھاتے اورقبروں کی دیکھ بھال کرتے رہے یہ قومی ورثہ بے یارومدگارہوکرٹوٹ پھوٹ کاشکارہیں یارگارکی مختص شدہ اراضی پربااثرلوگ قابض ہوچکے ہیں حتی کہ یارگارکی طرف جانے کیلئے راستہ تک نہیں چھوڑاگیاچاردیواری ٹوٹ چکی ہے اینٹیں لوگ اٹھاکرلے جاچکے ہیں جبکہ لوہاکاوزنی مین گیٹ اورپانی کیلئے لگایاگیانلکابھی غائب ہے مقامی لوگوں کاکہناہے کہ اگرصوتحال اسی طرح رہی توچندسال بعدقبروں اوریادگارکانام ونشان تک مٹ جائے گاانہوں نے وزیراعظم،چیف جسٹس آف پاکستان چیف آف آرمی سٹاف سے مطالبہ کیاہے کہ قومی ورثہ کومحفوظ بنایاجائے اورازسرنواس کی تعمیرکی جائے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -