پی ٹی آئی فارن فنڈنگ کیس،الیکشن کمیشن نے فیصلہ محفوظ کر لیا

پی ٹی آئی فارن فنڈنگ کیس،الیکشن کمیشن نے فیصلہ محفوظ کر لیا
پی ٹی آئی فارن فنڈنگ کیس،الیکشن کمیشن نے فیصلہ محفوظ کر لیا

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)الیکشن کمیشن نے پی ٹی آئی فارن فنڈنگ کیس میں دائر متفرق درخواستوں پر تفصیلی سماعت کے بعد اپنا فیصلہ 30 جون تک محفوظ کر لیا، جبکہ الیکشن کمیشن نے جاری شدہ سکروٹنی کی کارروائی کو جلد ازجلد منطقی انجام تک پہچانے کی ہدایات بھی جاری کیں، الیکشن کمیشن 30 جون کو دوبارہ سکروٹنی کمیٹی کی کارروائی پر نظر ثانی کرے گا۔

الیکشن کمیشن کی جانب سےجاری کردہ اعلامیےمیں کہاگیاہےکہ الیکشن کمیشن نے مختلف اہم نوعیت کے مقدمات کی سماعت کی،ان میں اکبر ایس بابر کی جانب سےپی ٹی آئی کے خلاف2014سےزیرسماعت مقدمہ میں دی جانےوالی متفرق درخواستوں پر سماعت ہوئی۔ اکبر ایس بابرنے روبرو سکروٹنی کمیٹی پی ٹی آئی کے خلاف مختلف نوعیت کی درخواستیں دی تھیں جن میں پی ٹی آئی کی طرف سے دھمکیوں کے خلاف نوٹس لینے اور سکروٹنی کمیٹی کے روبرو داخل شدہ تمام دستاویزات ریکار ڈ پر لانے وغیرہ کی استدعا کی گئی تھی جب کہ پی ٹی آئی کی طرف سے بھی ایک درخواست سکروٹنی کمیٹی کو دی گئی تھی جس میں معزز الیکشن کمیشن سےاستدعاکی تھی کہ سکروٹنی کی کارروائیاں میڈیاپر پبلک کرنےپراکبرایس بابر کےخلاف کارروائی عمل میں لائی جائے، سکروٹنی کمیٹی نے یہ تمام متفرق درخواستیں یکجاکرکےالیکشن کمیشن سےاستدعاکی کہ ان پرمناسب کارروائی عمل میں لائی جائے ۔

ان تمام متفرق درخواستوں پر الیکشن کمیشن نے آج تفصیلی سماعت کرنے کے بعد ان درخواستوں پر اپنا فیصلہ 30 جون 2020 تک محفوظ کر لیا۔ دوران سماعت چیئرمین سکروٹنی کمیٹی سے بھی جاری شدہ سکروٹنی عمل کی موجودہ صورت حال کی بابت بھی دریافت کیا گیا اور ان سے اس سلسلے میں رپورٹ ایک ہفتہ میں جمع کروانے کا حکم دیا گیا۔ علاوہ ازیں الیکشن کمیشن نے جاری شدہ سکروٹنی کی کارروائی کو جلد ازجلد منطقی انجام تک پہچانے کی ہدایات بھی جاری کیں، کمیشن 30 جون 2020 کو دوبارہ سکروٹنی کمیٹی کی کارروائی پر نظر ثانی کرے گا۔مزید مذکورہ بالا مقدمہ کی روزانہ کی بنیاد پر سماعت اور تمام دستیاب دستاویزات کو پبلک کرنے کے لئے احسن اقبال، سیکرٹری جنرل پی ایم ایل ن کی طرف سے دائر شدہ درخواست پر سماعت ہوئی۔ کمیشن نے مزید کارروائی اور بحث کے لئے درخواست 23 جون 2020 تک ملتوی کر دی۔ 

مزید :

علاقائی -اسلام آباد -